Book Name:Jahannam Main Lay Janay Walay Amaal (Jild-1)

                حسد کی ایک آفت یہ بھی ہے کہ اس میں اللہ  عَزَّ وَجَلَّ کے فیصلے پر ناراضگی پائی جاتی ہے کہ وہ کسی کو ایسی نعمت عطا فرمائے جس میں تمہارے لئے کسی نقصان کاپہلو نہ ہو تب بھی تم اس سے حسد کرتے ہو نیز اس میں اپنے مسلمان بھائی کی مصیبت پر خوشی کا اظہار کرنا بھی پایا جاتاہے ۔چنانچہ ،

{۱}اللہ  عَزَّ وَجَلَّکا فرمانِ عالیشان ہے:

اِنْ  تَمْسَسْكُمْ  حَسَنَةٌ  تَسُؤْهُمْ٘-وَ  اِنْ  تُصِبْكُمْ  سَیِّئَةٌ  یَّفْرَحُوْا  بِهَاؕ-                   (پ۴، ال عمران: ۱۲۰)

ترجمۂ کنز الایمان :  تمہیں کوئی بھلائی پہنچے تو انہیں برا لگے اور تم کو برائی پہنچے تو اس پر خوش ہوں ۔

{۲}

وَدَّ كَثِیْرٌ مِّنْ اَهْلِ الْكِتٰبِ لَوْ یَرُدُّوْنَكُمْ مِّنْۢ بَعْدِ اِیْمَانِكُمْ كُفَّارًا ۚۖ-حَسَدًا مِّنْ عِنْدِ اَنْفُسِهِمْ  (پ۱، البقرۃ: ۱۰۹)

ترجمۂ کنز الایمان :  بہت کتابیوں نے چاہا کاش تمہیں ایمان کے بعد کفر کی طرف پھیر دیں اپنے دلوں کی جلن سے۔

{۳}

وَدُّوْا لَوْ تَكْفُرُوْنَ كَمَا كَفَرُوْا فَتَكُوْنُوْنَ سَوَآءً  (پ۵،النسآء:  ۸۹)

ترجمۂ کنز الایمان : وہ تو یہ چاہتے ہیں کہ کہیں تم بھی کافر ہوجاؤ جیسے وہ کافر ہوئے توتم سب ایک سے ہوجاؤ۔

{۴}

اَمْ یَحْسُدُوْنَ النَّاسَ عَلٰى مَاۤ اٰتٰىهُمُ اللّٰهُ مِنْ فَضْلِهٖۚ-  (پ۵، النسآء:  ۵۴)

ترجمۂ کنز الایمان : یالوگوں سے حسد کرتے ہیں اس پر جو اللہ  نے انہیں اپنے فضل سے دیا۔

رشک اور مقابلہ بازی کے احکام

                دوسری صورت  یعنی رشک اور مقابلہ بازی حرام نہیں بلکہ یہ کبھی واجب ہوتا ہے تو کبھی مستحب اور کبھی مباح۔ چنانچہ،

 اللہ  عَزَّ وَجَلَّ کا فرمانِ عالیشان ہے:

سَابِقُوْۤا اِلٰى مَغْفِرَةٍ مِّنْ رَّبِّكُمْ  (پ۲۷، الحدید: ۲۱)

ترجمۂ کنز الایمان : بڑھ کر چلو اپنے رب کی بخشش کی طرف۔

                مسابقت یعنی مقابلہ بازی کسی چیز سے محروم رہ جانے کے خوف کا تقاضا کرتی ہے جیسے دو غلام اپنے آقا کی خدمت میں ایک دوسرے سے اس لئے سبقت لے جانا چاہیں تا کہ اس کے منظورِ نظر ہو جائیں ،اور یہ  دینی امورِواجبہ میں واجب ہے جیسے ایمان، فرض نماز اور زکوٰۃ کی نعمت پر رشک کرنا لہٰذا ان اُمور کو ادا کرنے والے کی طرح ہونے کو پسند کرنا واجب ہے ورنہ تم گناہ پر راضی ہونے والے بن جاؤ گے جو کہ حرام ہے، جبکہ فضیلت کے کاموں میں رشک کرنا مستحب ہے جیسے علم یا نیک کاموں میں مال خرچ کرنے پر رشک کرنا، جبکہ مباح نعمتوں پر رشک کرنا بھی مباح ہے جیسے نکاح وغیرہ پررشک کرنا، البتہ مباح اُمور (یعنی جائز کاموں )  میں مقابلہ بازی فضائل میں کمی کر دیتی ہے ، نیز یہ زہد، رضا اور توکل کے بھی منافی ہے اور ایسے کاموں میں مقابلہ کرنا گناہ میں مبتلاہوئے بغیربھی مقاماتِ رفیعہ سے روک دیتا ہے۔

                البتہ!  یہاں ایک باریک و دقیق نکتہ کی بات سے آگاہ ہونا ضروری ہے تا کہ انسان بے خبری میں حسد کے حرام فعل میں  مبتلانہ ہو جائے، اور وہ یہ ہے کہ جو انسان غیر جیسی نعمت کے حصول سے مایوس ہو جاتا ہے تو وہ خود کو اس نعمت کے حامل شخص سے کمتر و ناقص سمجھنے لگتا ہے، نیز اس کا نفس یہ پسند کرنے لگتا ہے کہ اس کا نقص کسی طریقہ سے دور ہو جائے اور یہ اسی وقت ہو سکتا ہے جب وہ اس نعمت کے حصول میں کامیاب ہو کر یا پھراس نعمت کے حامل شخص کی نعمت کے زائل ہو جانے کے سبب اس کے ہم پلہ و برابر  ہوجائے۔

                فرض کیا کہ وہ اس صاحبِ نعمت شخص کے مساوی ہونے سے مایوس ہو گیا تو تب بھی اس کے دل میں اس چیز کی محبت باقی رہ جائے گی کہ وہ نعمت اس شخص کے پاس بھی نہ رہے جس کی وجہ سے وہ اس پر ممتاز حیثیت رکھتا ہے کیونکہ اس نعمت کے ختم ہوتے ہی ا س کا اس صاحبِ نعمت شخص سے کمتر ہونا بھی ختم ہو جائے گا اور یہ بھی ہو سکتا ہے کہ اب وہ اس پر فضیلت لے جائے۔

                اس شخص کو قابلِ مذمت حسد کرنے والا حاسد اسی صورت میں کہا جا سکتا ہے بشرطیکہ وہ اس نعمت کو اس شخص سے زائل کرنے پر قادر ہو کہ اُسے زائل کر دے، اور اگر اس نعمت کے زوال پر قدرت کے باوجود اس کاتقوی وپرہیزگاری اسے اس کام سے اور اس کی نعمت کے زوال کی تمنا سے روک دے تواس پر کوئی گناہ نہیں کیونکہ یہ ایک فطرتی اَمر ہے، نفسِ انسانی اس سے خالی نہیں ہوتااور ہو سکتا ہے کہ اس حدیث مبارکہ کا یہی مفہوم ہو کہ،

{114}…صاحبِ معطر پسینہ، باعثِ نُزولِ سکینہ، فیض گنجینہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمکا فرمانِ عالیشان ہے :  ’’ ہرآدمی حاسد ہے ۔ ‘‘

 (جامع الاحادیث،الحدیث: ۱۵۷۷۱،ج۶،ص۴۳۲)

{115}… شہنشاہِ مدینہ،قرارِ قلب و سینہصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمکا فرمانِ عالیشان ہے :  ’’ مسلمان تین چیزوں سے الگ نہیں ہو

 سکتا:   (۱) حسد  (۲) گمان اور  (۳) بدشگونی، اس کے لئے ان سے نکلنے کا طریقہ یہ ہے کہ جب تم حسد کرو تو حد سے تجاوز نہ کر و ۔ ‘‘         (اتحاف السادۃالمتقین،کتاب ذم الغضب والحقدوالحسد،باب بیان حقیقۃ الحسدحکمہ اقسامہ مراتبہ،ج۹،ص۵۰۱)

                یعنی اگرتم اپنے دل میں کسی کے بارے میں کوئی چیز پاؤ تو اس پر عمل نہ کرو۔لیکن جو شخص غیر سے کسی نعمت میں برابری حاصل کرنا چاہے اور پھر اس سے عاجزآ جائے،بالخصوص جب وہ اس کا ہم مرتبہ ہو تو اس سے بعید ہے کہ وہ اس کے زوال کی تمنا نہ کرے، مقابلہ بازی کی یہ صورت حرام حسد سے مشابہ ہے، لہٰذا کامل احتیاط ضروری ہے کیونکہ آدمی جب اپنے نفس کی پسند پر کان دھرے گا اوراپنے اختیار سے ذی نعمت سے نعمت کا زوال چاہنے کے سبب مساوات و برابری کی طرف مائل ہو گا تو یقیناحرام حسد کا شکار ہو جائے گا، اور اس سے نجات صرف وہی پا سکتا ہے جو پختہ ایمان اور تقوٰی میں راسخ ہو،

                بعض اوقات دوسرے سے کم تر ہونے کا خوف انسان کوحرکت دیتا اوراس بات پر آمادہ کرتا ہے کہ وہ ممنوع حسد کا شکار ہو جائے اور اس کی طبیعت بھی غیر کی نعمت کے زوال کی طرف مائل ہوجائے تاکہ دونوں میں مساوات ہو سکے، اس مقام میں کوئی رخصت نہیں خواہ یہ دینی مقاصد میں برابری کی خواہش ہو یا دنیوی معاملہ میں برابری کی تمنا ہو۔

 



Total Pages: 320

Go To