Book Name:Jahannam Main Lay Janay Walay Amaal (Jild-1)

{11}…ایک اور روایت میں ہے کہ رسولِ بے مثال، بی بی آمنہ کے لال صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا:  ’’ 3افراد کو جہنم سے نہ بچایا جائے گا:   (۱) احسان جتانے والا  (۲) والدین کا نافرمان اور  (۳)  شراب کا عا دی ۔ ‘‘

 (کنزالعمال،کتاب المواعظ والرقائق،الحدیث: ۴۳۷۹۸،ج۱۶،ص۱۴)

{12}…خاتَمُ الْمُرْسَلین ، رَحْمَۃٌ لّلْعٰلمینصَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمکا فرمانِ عالیشان ہے :  ’’ مکَّار، فریبی، بخیل اور احسان جتانے والا جنت میں داخل نہ ہو گا۔ ‘‘                    (المسندللامام احمد بن حنبل،مسند ابی بکر الصدیق، الحدیث:  ۳۲،ج۱،ص۲۷)

{13}…سیِّدُ المُبلِّغین،رَحْمَۃٌ لِّلْعٰلَمین  صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمکا فرمانِ عالیشان ہے :  ’’ 5افراد جنت میں داخل نہ ہوں گے:   (۱)  شراب کا عادی  (۲) جادو کرنے والا  (۳) قطع رحمی کرنے والا  (۴) کاہن اور  (۵) احسان جتلانے والا۔ ‘‘

 (المسندللامام احمد بن حنبل،مسند ابی سعید الخدری، الحدیث: ۱۱۱۰۷،ج۴،ص۳۰)

تنبیہ:

                مذکورہ گناہ کو کبائر میں شمار کرنے کی ایک جماعت نے تصریح کی ہے اور یہ ان احادیثِ پاک میں وارد سخت وعید کی بناء پر بالکل ظاہر ہے۔

اشعار

                سیدناامام شافعی رَحْمَۃُ اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہکے چند اشعار:

لَاتَحْمِلَنَّ مِنَ الْاَنَامِ                                                                     عَلَیْکَ اِحْسَانًاوَّ مَنًّا

وَاخْتَرْلِنَفْسِکَ حَظَّھَا                                                                        وَاصْبِرْ فَاِنَّ الصَّبْرَ جُنَّۃ

مِنَنُ الرِّجَالِ عَلَی الْقُلُوْبِ                                                          اَشَدُّ مِنْ وَّقْعِ الْاَسِنَّۃ

                ترجمہ:  (۱) لوگوں میں سے کسی کااپنے اوپر احسان مت اُٹھا۔

                                 (۲) اور اپنے نفس کا حصہ اختیار کر اور صبر کرکیونکہ صبر ڈھال ہے۔

                                 (۳) لوگوں کے احسانات دلوں پرنیزے لگنے سے زیادہ سخت ہیں ۔

                ایک دوسرا شاعر کہتا ہے :

وَصَاحِبٌسَلَفَتْ مِنْہٗ اِلَیَّ یَدٌ                                                   اَبْطَاَ عَلَیْہِ مُکَافَاتِی فَعَادَانِی

لَمَّا تَیَقَّنَ اَنَّ الدَّھْرَ حَاوَلَنِی                                                اَبْدَی النَّدَامَۃَ مِمَّا کَانَ اَوْلَانِی

اَفْسَدْتَ بِالْمَنِّ مَا قَدَّمْتَ مِنْ حُسْن                                                           لَیْسَ الْکَرِیْمُ اِذَآ اَعْطٰی بِمَنَّانِ

                ترجمہ:  (ا) وہ ایسا شخص ہے کہ جس کا احسان مجھ تک پہنچنے میں سبقت لے گیا لیکن میری طرف سے بدلہ اسے دیر سے پہنچا تو اس نے وہ مجھے واپس کردیا۔

 (۲) لیکن جب اسے یہ یقین ہوگیاکہ زمانے نے میراارادہ کر لیا ہے تواسے اس احسان سے شرمندگی ہونے لگی جو اس نے مجھ پر کیا تھا۔

 (۳) جتانے سے تم نے پچھلی نیکی برباد کر دی، کیونکہ سخی جب کچھ دیتا ہے تو جتاتا نہیں ۔

٭٭٭٭٭٭

کبیرنمبر136:        

حاجت مند کوزائد اَزضرورت پانی سے روکنا

{1}…حضرت سیدنا ابوہریرہ رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہ  سے مروی ہے کہ شفیعُ المذنبین، انیسُ الغریبین، سراجُ السالکینصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا :  ’’ تین شخص ایسے ہیں جن سے اللہ  عَزَّ وَجَلَّ قیامت کے دن نہ کلام فرمائے گا نہ ان پر نظرِ رحمت فرمائے گا اور نہ ہی انہیں پاک کرے گا اور ان کے لئے درد ناک عذاب ہے (ان میں ایک وہ شخص ہے جو )  بیابان میں ضرورت سے زائد پانی پر قابض ہو اور مسافر کو اس سے روک دے۔ ‘‘               

 (صحیح مسلم، کتاب الایمان، باب بیان غلظ تحریم الخ،الحدیث: ۲۹۷،ص۶۹۶)

{2}… ایک اور روایت میں ہے :  ’’ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ اس سے ارشاد فرمائے گا: آج میں تجھ سے اپنا فضل اس طرح روک لوں گا جس طرح تو نے اس چیز کو روکا جو تیرے ہاتھ کی کمائی نہیں ۔ ‘‘

 (صحیح البخاری، کتاب المساقاۃ ، باب من رای ان صاحب الحوض الخ، الحدیث:  ۲۳۶۹،ص۱۸۵)

{3}…ایک صحابی نے حضورنبی کریم  صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمسے دریافت کیا:  ’’ یا رسول اللہ  عَزَّ وَجَلَّو صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم!  کون سی چیز جس سے منع کرنا جائز نہیں ؟ ‘‘  تو آپ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا:  ’’ پانی۔ ‘‘  اس نے پھر عرض کی، ’’ یا رسول اللہ  عَزَّ وَجَلَّو صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم!  کس چیزسے منع کرنا جائز نہیں ؟ ‘‘  تو آپ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا:  ’’ نمک۔ ‘‘  اس نے پھر عرض کی، ’’ یا رسول اللہ  عَزَّ وَجَلَّو صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم!  کس چیزسے منع کرنا جائز نہیں ؟ ‘‘ تو آپ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا:  ’’ تمہارا بھلائی کے کام کرنا تمہارے لئے بہتر ہے۔ ‘‘  (سنن ابی داؤد، کتاب الاجارۃ ، باب فی منع الماء ، الحدیث:  ۳۴۷۶،ص۱۴۸۲)

{4}…رحمتِ کونین، ہم غریبوں کے دلوں کے چین صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمکا فرمانِ عالیشان ہے :  ’’ لوگ تین چیزوں گھاس، پانی اور آگ میں ایک دوسرے کے شریک  (یعنی حصہ دار)  ہیں ۔ ‘‘  (المرجع السابق، الحدیث: ۳۴۷۷،ص۱۴۸۲، ’’ الناس ‘‘  بدلہ ’’  مسلمون ‘‘ )

{5}…اُم لمؤمنین حضرت سیدتنا عائشہ صدیقہ رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہَا  نے عرض کی:  ’’ یا رسول اللہ  عَزَّ وَجَلَّو صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم!  وہ کون سی چیز ہے جس سے منع کرنا جائز نہیں ؟ ‘‘  تو آپ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا:  ’’ پانی، نمک اور آگ۔ ‘‘  آپ رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہَا  فرماتی ہیں کہ پھر میں نے عرض کی ’’ یا رسول اللہ  عَزَّ وَجَلَّو صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم!  اس پانی سے نہ روکنے کی حکمت تو ہم سمجھ گئے نمک



Total Pages: 320

Go To