Book Name:Jahannam Main Lay Janay Walay Amaal (Jild-1)

از: شیخِ طریقت، امیرِ اہلسنّت ،بانی دعوتِ اسلامی حضرت علّامہ

مولانا ابوبلال محمد الیاس عطاؔر قادری رضوی ضیائی دامت برکاتہم العالیہ

                اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ عَلٰی اِحْسَا نِہٖ وَ بِفَضْلِ رَسُوْلِہٖصَلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ وسلَّمتبلیغِ قرآن و سنّت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک  ’’ دعوتِ اسلامی ‘‘ نیکی کی دعوت، اِحیائے سنّت اور اشاعتِ علمِ شریعت کو دنیا بھر میں عام کرنے کا عزمِ مُصمّم رکھتی ہے، اِن تمام اُمور کو بحسنِ خوبی سر انجام دینے کے لئے متعدَّد مجالس کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جن میں سے ایک مجلس  ’’ المدینۃ العلمیۃ ‘‘ بھی ہے جو دعوتِ اسلامی کے عُلما و مُفتیانِ کرام کَثَّرَ ھُمُ اللّٰہُ تعالٰی پر مشتمل ہے، جس نے خالص علمی، تحقیقی او راشاعتی کام کا بیڑا اٹھایا ہے۔ اس کے مندرجہ ذیل چھ شعبے ہیں :

 (۱) شعبۂ کتُبِ اعلیٰحضرت                                    (۲) شعبۂ تراجمِ کتب                (۳) شعبۂ درسی کُتُب

   (۴) شعبۂ اصلاحی کُتُب                     (۵) شعبۂ تفتیشِ کُتُب              (۶) شعبۂ تخریج

                 ’’ ا لمد ینۃ العلمیۃ ‘‘ کی اوّلین ترجیح سرکارِ اعلیٰحضرت اِمامِ اَہلسنّت،عظیم البَرَکت،عظیمُ المرتبت، پروانۂ شمعِ رِسالت، مُجَدِّدِ دین و مِلَّت، حامیِ سنّت ، ماحیِ بِدعت، عالِمِ شَرِیْعَت، پیرِ طریقت،باعثِ خیر و بَرَکت، حضرتِ علاّمہ مولانا الحاج الحافِظ القاری شاہ امام اَحمد رَضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن کی گِراں مایہ تصانیف کو عصرِ حاضر کے تقاضوں کے مطابق حتَّی الْوَسع سَہْل اُسلُوب میں پیش کرنا ہے۔ تمام اسلامی بھائی اور اسلامی بہنیں اِس عِلمی ،تحقیقی اور اشاعتی مدنی کام میں ہر ممکن تعاون فرمائیں اورمجلس کی طرف سے شائع ہونے والی کُتُب کا خود بھی مطالَعہ فرمائیں اور دوسروں کو بھی اِ س کی ترغیب دلائیں ۔

                اللّٰہعَزَّ وَجَلَّ  ’’ دعوتِ اسلامی ‘‘  کی تمام مجالس بَشُمُول ’’ المد ینۃ العلمیۃ ‘‘  کو دن گیارہویں اور رات بارہویں ترقّی عطا فرمائے اور ہمارے ہر عملِ خیر کو زیورِ اِخلاص سے آراستہ فرماکر دونو ں جہاں کی بھلائی کا سبب بنائے۔ہمیں زیرِ گنبدِ خضرا  شہادت،جنّت البقیع میں مدفن اور جنّت الفردوس میں جگہ نصیب فرمائے ۔  اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                 رمضان المبارک ۱۴۲۵ھ

پہلے اسے پڑھ لیجئے!

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!

                 اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  حکیم ہے اورداناؤں کاقول ہے:  ’’ فِعْلُ الْحَکِیْمِ لَایَخْلُوْ عَنِ الْحِکْمَۃِیعنی حکیم کا کوئی فعل حکمت سے خالی نہیں ہوتا۔ ‘‘

                 اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  نے انسانوں کو زندگی گزارنے کاطریقہ بتایااوردو راستے دکھائے ،ایک راستہ جنت کی طرف جاتاہے اور دوسرے کی انتہاء جہنم ہے، اوراللہ  عَزَّ وَجَلَّنے ہمیں سیدھے راستے پرچلنے اوراچھے طریقے پر زندگی گزارنے کے لئے حضور نبی ٔ کریم، رء ُوف رحیم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکی اطاعت وفرمانبرداری کا پابندبنا یا،ارشاد باری تعالیٰ ہے :

لَقَدْ كَانَ لَكُمْ فِیْ رَسُوْلِ اللّٰهِ اُسْوَةٌ حَسَنَةٌ  (پ۲۱،الاحزاب: ۲۱)

ترجمۂ کنز الایمان : بے شک تمہیں رسول اللہ  کی پیروی بہتر ہے۔

اور ہر کام میں آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکی پیروی کاحکم یوں ارشاد فرمایا :

وَ مَاۤ اٰتٰىكُمُ الرَّسُوْلُ فَخُذُوْهُۗ-وَ مَا نَهٰىكُمْ عَنْهُ فَانْتَهُوْاۚ-  (پ۲۸،الحشر: ۷)

ترجمۂ کنز الایمان : اور جو کچھ تمہیں رسول عطا فرمائے وہ لو اورجس سے منع فرمائیں بازرہو۔

                اس قادر وحکیم پروردگار عَزَّ وَجَلَّ  نے اپنے حبیبِ مکرم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکو حکمتوں کابیش بہا خزانہ عطا فرمایاتو نبی ٔ کریم  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے ہمیں جن کاموں کا حکم فرمایا ان کی بجا آوری ہم پر لازم ہے کیونکہ وہ بھی باذن پروردگارعَزَّ وَجَلَّ  حکیم ہیں اور حکیم جن باتوں کاحکم دے اور جن سے منع کرے تو ضرور ان میں کوئی نہ کوئی حکمت مضمر ہوتی ہے ،پس جو شخص طاعات پر عمل اور گناہوں سے اجتناب کرے گا اسے جنت کی ا بدی وسرمدی راحتیں عطا کی جائیں گی اور جہنم سے نجات کا سامان ہو جائے گا۔

                 صغیرہ وکبیرہ گناہوں کی پہچان حضرت سیدنا عبد اللہ  بن عباس رَضِیَ اللہ  تَعَالٰی عَنْہ  سے مروی اس حدیث پاک سے ہوتی ہے کہ حضور نبی ٔ پاک صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا:   ’’ کوئی گناہ بار بار کرنے سے صغیرہ نہیں رہتااورکوئی گناہ توبہ کے بعد کبیرہ نہیں رہتا۔ ‘‘  (کشف الخفاء ،الحدیث: ۳۰۷۰،ج۲، ص۳۳۲)  

                کبیرہ اورصغیرہ گناہوں کافرق مفتی احمد یار خان نعیمی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہ  القَوِی تفسیر نعیمی میں اس طرح بیان فرماتے ہیں :  ’’ مطلق گناہِ کبیرہ شرک ہے اور مطلق گناہ ِصغیرہ برے خیالات ۔ان کے درمیان ہر گناہ اپنے نیچے کے لحاظ سے کبیرہ ہے، اوپر کے لحاظ سے صغیرہ۔

گناہ کا صغیرہ کبیرہ ہوناکرنے والے کے لحاظ سے ہے ۔ایک ہی گناہ ہم جیسے گنہگاروں کے لئے صغیرہ ہے اور متّقی پرہیز گاروں کے لئے کبیرہ ، جس پر عتاب الٰہی عَزَّ وَجَلَّ  ہو جاتاہے۔حسنات الابرارسیِّئات المقربین ۔بلکہ حضرات انبیاء کرام وخاص اولیاء عظام کی خطاؤں پر بھی پکڑ ہوجاتی ہے۔ حالانکہ ہمارے لئے خطا گناہ ہی نہیں ۔ ‘‘   (تفسیر نعیمی،سورۃ النسآء تحت الآیۃ : ۳۱،ج۵،ص ۴۰۔۴۱)

                اللہ  عَزَّ وَجَلَّ کا فرمانِ عالیشان ہے:

اِنْ تَجْتَنِبُوْا كَبَآىٕرَ مَا تُنْهَوْنَ عَنْهُ نُكَفِّرْ عَنْكُمْ سَیِّاٰتِكُمْ وَ نُدْخِلْكُمْ مُّدْخَلًا كَرِیْمًا (۳۱)   (پ۵،النسآء: ۳۱)

ترجمۂ کنزالایمان : اگر بچتے رہو کبیرہ گناہوں سے جن کی تمہیں ممانعت ہے تو تمہارے اور گناہ ہم بخش دیں گے اور تمہیں عزت کی جگہ داخل کریں گے ۔

                صدر الافاضل سید محمد نعیم الدین مراد آبادی علیہ رحمۃ اللہ  الھادی اس آیہ ٔ مبارکہ کی تفسیر میں فرماتے ہیں :  ’’ کفر وشرک تونہ بخشا جائے گا اگر آدمی اسی پر مرا (اللہ  کی پناہ) باقی تمام گناہ صغیرہ ہوں یا کبیرہ اللہ  کی مشیَّت میں ہے چاہے ان پر عذاب کرے چاہے معاف فرمائے۔ ‘‘  (خزائن العرفان،پ۵،سورۃ النسآء ،تحت الآیۃ۳۱،ص۱۴۹)

                زیرِ نظر کتاب ’’ جہنم میں لے جانے والے اعمال ‘‘  علامہ ابو العباس احمد بن محمد بن علی بن حجر المکی الہیتمی علیہ رحمۃ اللہ  القوی کی پُر اثر تالیف  اَلزَّوَاجِرُ عَنِ اقْتِرَافِ الْکَبَائِرِ کے اردو ترجمہ کا پہلا حصہ



Total Pages: 320

Go To