Book Name:Jahannam Kay Khatrat

میں مدینے کا سچ مُچ کُتّا   [1]؎ بن گیا ہوتا

کاش! ایسا ہوجاتا خاک بن کے طیبہ کی

مصطفی  صلی   اللہ  علیہ وسلم کے قدموں سے میں لپٹ گیا ہوتا

پھول بن گیا ہوتا گُلشن مدینہ کا

کاش ! ان کے صحرا کا خار بن گیا ہوتا

میں بجائے انساں کے کوئی پودا  [2]؎  ہوتا یا

نَخْل بن کے طیبہ کے باغ میں کھڑا ہوتا

گلشن مدینہ کا کاش! ہوتا میں سبزہ

یا بطورِ تنکا  [3]؎  ہی میں وہاں پڑا ہوتا

مَرغزار طیبہ کا کاش! ہوتا پروانہ

گردِ شمع پھر پھر کر کاش! جل گیا ہوتا  

کاش! خَر یا خَچّریا گھوڑا بن کر آتا اور

آپ     صلی   اللہ  علیہ وسلم نے بھی کھُونٹے سے باندھ کر رکھا ہوتا

جاں کنی   [4]؎ کی تکلیفیں ذِبح سے ہیں بڑھ کر کاش!

مرغ بن کے طیبہ میں ذِبح ہوگیا ہوتا

آہ!کثرت عصیاں ہائے! خوف دوزخ کا

کاش! اس جہاں کا میں نہ بشر بنا ہوتا

شور اُٹھا یہ محشر میں خُلد میں گیا عطارؔ

گرنہ وہ   صلی   اللہ  علیہ وسلم  بچاتے تو نار میں گیا ہوتا   

 مآخذ و مراجع

نمبر شمار                                                                                         نام کتاب                                                                                      مطبوعہ

۱                                                                                                     شرح العقائد النسفیۃ                                                               باب المدینہ

۲                                                                                                    حاشیۃ الصاوی علی تفسیر الجلا لین                                 دار الفکر بیروت

۳                                                                                                   مشکاۃ المصابیح                                                                      دار الفکر بیروت

۴                                                                                                   صحیح مسلم                                                                             دار ابن حزم بیروت

۵                                                                                                   سنن الترمذی                                                                           دار الفکر بیروت

۶                                                                                                    صحیح البخاری                                                                       دار الکتب العلمیۃ بیروت

۷                                                                                                   سنن ابی داود                                                                               دار احیاء التراث العربی

۸                                                                                                   المسند للامام احمد بن حنبل                                             دار الفکر بیروت

۹                                                                                                    سنن ابن ماجہ                                                                          دار المعرفۃ بیروت

۱۰                                                                                                  کنز العمال فی سنن الاقوال والافعال                                    دار الکتب العلمیۃ بیروت

 



[1]     حضرت علامہ جامی رحمۃ اللہ علیہ عشق رسول صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   میں ڈوب کر اپنی بے تاب آرزو کا ذکر کتنے والہانہ انداز میں کر رہے ہیں       ؎

سَگَت راکاش!جامی ؔ نام بودے

کہ آید بر زَبانَت گاہے گاہے

یعنی یارسول اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کاش!آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کے کسی کُتّے کا نام جامی ؔ ہوتا کہ اس بہانے کبھی کبھی میرا نام بھی آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کی زبانِ اقدس پر آجاتا۔

[2]      سیدنا صدیق اکبر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ  (انکسارًا) فرماتے ہیں ، کاش! میں کسی مومن کے سینے کا بال ہوتا ۔ کاش!میں درخت ہوتا جو کھالیا جاتا ، یا کاٹ لیا جاتا ، کاش ! میں سبزہ ہوتا جسے جانور کھاجاتے ۔  (تاریخ الخلفاء)

[3]       سیدنا فاروق اعظم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ نے ایک بار زمین سے ایک تنکا اٹھا کر فرمایا، کاش!میں بھی ایک تنکا ہوتا۔ کاش!میں کچھ بھی نہ ہوتا ، کاش میں پیدا ہی نہ ہوتا۔    (ایضاً)

[4]      علامہ جلال الدین سیوطی رحمۃ اللہ علیہ نقل کرتے ہیں ،’’موت دنیا وآخرت کی ہولناکیوں میں سب سے زیادہ ہولناک ہے ۔ یہ آروں سے چیرنے ، قینچیوں سے کاٹنے اورہانڈیوں میں ابالنے سے بھی سخت تر ہے۔ اگر مردہ زندہ ہوکر شدائد موت لوگوں پر ظاہر کردے تو ان کی نیند اڑجائے اورسارا عیش وآرام تلخ ہوجائے ۔ ‘‘            (شرح الصدور)

حضرت سیدنا انس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ   سے مروی ہے کہ مرنے والے انسان کو فرشتے باندھ لیتے ہیں ورنہ تو وہ جنگلات میں بھاگتا پھرے۔              (ایضاً)

عاشقِ مدینہ (یہاں امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے ازراہ تواضع اپنے آپ کو سگ مدینہ فرمایاہے) کہتاہے بظاہر ذِبح ہونے والے جانور کو دیکھ کر ایسا محسوس ہوتاہے کہ وہ بے حد تکلیف میں ہے مگر آہ !انسان کی جانکنی کی تکلیفیں ذبح ہوکر تڑپنے والے جانور سے ہزارہا گنا زائد ہیں ۔ اے  کاش!بوقت نزع جلوئہ محبوب صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نصیب ہوجائے تو پھر تمام تکلیفیں ہیچ ہیں ۔



Total Pages: 57

Go To