Book Name:Aaina e Qayamat

بے کسی اب کون اٹھائے گا نشانِ اہل بیت

تیری قدرت جانورتک آب سے سیراب ہوں

پیاس کی شدت میں تڑپے بے زبا نِ اہلِ بیت

قافلہ سالار منزل کو چلے ہیں سونپ کر

وارثِ بے وارثان کو کاروانِ اہل بیت

فاطمہ کے لاڈلے کاآخری دیدار ہے

حشر کا ہنگامہ برپا ہے میانِ اہل بیت

وقت ِرخصت کہہ رہا ہے خاک میں ملتا سہاگ

لو سلامِ آخری اے بیوگانِ اہل بیت

ابرِفوجِ دشمناں میں اے فلک یوں ڈوب جائے

فاطمہ کا چاند مہرِ آسمانِ اہل بیت

کس مزے کی لذتیں ہیں آبِ تیغِ یار میں

خاک وخون میں لوٹتے ہیں تشنگانِ اہل بیت

باغِ جنت چھوڑ کر آئے ہیں محبوبِ خدا

اے زہے قسمت تمہا ری کشتگانِ اہل بیت

حوریں بے پردہ نکل آئی ہیں سرکھولے ہوئے

آج کیسا حشر ہے یارب([1]) میانِ اہل بیت

کوئی کیوں پوچھے کسی کو کیا غرض اے بے کسی

آج کیسا ہے مریضِ نیم جانِ اہل بیت

گھر لٹانا جان دینا کوئی تجھ سے سیکھ جائے

جانِ عالم ہو فدا اے خاندانِ اہل بیت

سرشہیدانِ محبت کے ہیں نیزوں پر بلند

اور اونچی کی خدانے قدروشانِ اہل بیت

دولت دیدار پائی پاک جانیں بیچ کر

کربلا میں خوب ہی چمکی دوکانِ اہل بیت

زخم کھانے کو تو آبِ تیغ پینے کو دیا

خوب دعوت کی بلا کر دشمنانِ اہل بیت

اپنا سودا بیچ کر بازار سونا کر گئے

کونسی بستی بسائی تاجرانِ اہل بیت

اہلِ بیتِ پاک سے گستاخیاں بے باکیاں

لَعْنَۃُ   اللہِ   عَلَیْکُمْ   دشمنانِ   اہل   بیت

بے ادب گستاخ فرقے کو سنا دے اے حسنؔ

 



[1]    مصنف رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ کے نعتیہ دیوان ’’ ذوقِ نعت ‘‘ میں یہاں ’’یارب ‘‘کے بجائے’’ برپا‘‘ لکھا  ہے۔ علمیہ



Total Pages: 42

Go To