Book Name:Zaid Unglian Katwana Kaisa

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَالصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِط

زائد اُنگلیاں کٹوانا کیسا؟ ([1])

شیطان لاکھ سُستی دِلائے یہ رِسالہ(۱۸ صَفحات) مکمل پڑھ لیجیے اِنْ  شَآءَ اللّٰہ  معلومات کا اَنمول خزانہ  ہاتھ آئے  گا۔

دُرُود شریف کی فضیلت

فَرمانِ مصطفےٰصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم ہے : جس نے مجھ پر صبح شام دَس دَس بار دُرُودِ پاک پڑھا اُسے قىامت کے دِن مىرى شَفاعت ملے گى۔ ([2])

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                                                صَلَّی اللہُ عَلٰی مُحَمَّد

زائد اُنگلیاں کٹوانا کیسا؟

سُوال : میری بیٹی کے ہاتھ اور پاؤں میں چھ  چھ  اُنگلیاں ہیں ، اگر میں یہ اُنگلیاں کٹوانا چاہوں تو کیا کٹواسکتا ہوں؟

جواب : جی ہاں!اگر زائد عضو ہو تو عُلَمائے کِرام اسے کٹوانے کی اِجازت دیتے ہیں(جبکہ اس زائد عضو  کو  کاٹنے میں ہلاکت کا غالِب اندیشہ نہ ہو ورنہ اِجازت نہیں۔ )([3])

رحم دِلی پیدا کرنے کا طریقہ

سُوال : اگر کسى شخص کو بے زبان مخلوق پر ظلم کرنے کى عادت پڑ گئى ہو تو اسے  کس طرح سے سمجھاىا جائے؟ نیز اگر کوئى شخص رحم دِل اِنسان بننا چاہے تو وہ  اس کے لىے کیا کرے؟ (احمد پور شرقیہ محراب والا سے سُوال)  

جواب : اىسے شخص کو پىار سے سمجھاىا جائے اور اِس طرح کى رِواىات و حکاىات سنائى جائىں جن مىں جانوروں  پر ظلم کرنے کى ممانعت ہے اور پھر اللہپاک کے عذاب سے اسے  ڈراىا جائے۔ ([4])سمجھانے سے ظاہر ہے کہ فائدہ ہوتا ہے۔ قرآنِ کریم میں ہے : (وَّ ذَكِّرْ فَاِنَّ الذِّكْرٰى تَنْفَعُ الْمُؤْمِنِیْنَ(۵۵)) (پ ، ۲۷ ، الذّٰریٰت : ۵۵) ترجمۂ کنزالایمان : “ اور سمجھاؤ کہ سمجھانا مسلمانوں کو فائدہ دیتا ہے۔ “ ہم کسی کو غَلَطی پر سمجھا ہى سکتے ہىں اِس کے عِلاوہ  کىا کر سکتے ہىں؟لہٰذا بار بار سمجھاتے رہىں اِنْ شَآءَ اللّٰہکبھى نہ کبھى اس کى سمجھ مىں آ ہى جائے گا اور وہ غَلَطی سے باز آ جائے گا۔ اگر وہ نہىں بھى سمجھتا  تب بھی ہمىں سمجھانے کا ثواب ملتا رہے گا ۔

بہرحال دِل مىں نَرمى پىدا کرنے کے لىے سختى کے اَسباب دُور کرنے ہوں گے۔ دِل کی سختى کے اىک دو نہىں بلکہ کئى اَسباب ہىں جن میں سے ایک سبب گناہ کرنا بھى ہے۔ ([5])بعض ایسے کام بھی ہىں جو گناہ نہىں  لیکن  پھر بھى دِل کی سختى کا سبب ہىں جىسے فُضُول گفتگو کرنا ، بغىر تعجب کے فُضُول ہنسنا اور بغىر بھوک کے کھانا ۔ ([6])اِس طرح کے کئی اور اَسباب کتابوں مىں لکھے ہوئے ہىں جنہیں دُور کرنے سے  دِل نَرم ہو گا۔ نیز بندہ اللہ پاک سے دِل کی نَرمی کی  دُعا بھى کرتا رہے کہ وہ دِل کو نَرم کر دے ۔ اللہ کرىم مالک ہے ، مُقَلِّبُ الْقُلُوْب یعنی  دِلوں کو پھىرنے والا ہے وہ دِلوں مىں نَرمى عطا فرما دے تو اس کے لىے کوئى مشکل نہىں ہے۔ بندہ صِدق و اِخلاص کے ساتھ اللہ پاک کی بارگاہ مىں رُجوع کرے  اور  عاجزى وا<نکساری  کے ساتھ گِڑ گِڑائے اِنْ شَآءَ اللّٰہ اس کی بارگاہ سے نَرمى کى بھىک بھى عطا ہو جائے گى۔ ([7])

پنج وقتہ نمازوں کے بعد کا وَظیفہ

سُوال : پنج وقتہ نماز کے بعد پڑھنے والا وَظىفہ اِرشاد فرمادىجئے۔ (SMSکے ذَریعے سُوال)

جواب : ہر نماز کے بعد آیۃُ الْکُرْسِى پڑھیے اِنْ شَآءَاللّٰہ جنَّت مىں داخِلہ ملے گا۔ ([8]) نیز  ہر نماز کے بعد 33 بار سُبْحٰنَ اللہ ، 33بار اَلْحَمْدُلِلّٰہ اور 34بار اَللہُ اَکْبَر پڑھیں ىا 33بار اَللہُ اَکْبَر اور اىک بار آخر مىں چوتھا کلمہ پڑھ لیجئے۔ ([9])ىہ وہ اَوراد ہىں جو اَحادىثِ مُبارَکہ مىں آئے ہىں ۔ اىک بار قُلْ ھُوَ اللہ شرىف پڑھ لىں۔ مزید اَوراد و وَظائف شجرۂ قادرىہ اور  مَدَنى پنج سُورہ مىں دیکھے جا سکتے ہیں ۔ ([10])  

 



[1]    یہ رِسالہ ۱۶رَجَبُ الْمُرَجَّب ۱۴۴۰ھ بمطابق 23 مارچ 2019 کو عالمی مَدَنی مَرکز فیضانِ مدینہ بابُ المدینہ(کراچی) میں ہونے والے مَدَنی مذاکرے کا تحریری گلدستہ ہے ، جسے اَلْمَدِیْنَۃُ الْعِلْمِیَّۃ کے شعبے’’فیضانِ مَدَنی مذاکرہ‘‘نے مُرتَّب کیا ہے۔ (شعبہ فیضانِ  مَدَنی مذاکرہ)       

[2]    مجمع الزوائد ، کتاب الاذکار ،  باب  ما یقول اذا اصبح و اذا امسیٰ ،  ۱۰ / ۱۶۳ ،  حدیث : ۱۷۰۲۲ دار الفکر بیروت

[3]    فتاویٰ ھندية ،  کتاب الکراھية ، الباب الحادی و العشرون فیما یسع من جراحات بنی آدم...الخ ، ۵ / ۳۶۰  ماخوذاً دار الفکر بیروت

[4]    حضرتِ سَیِّدُنا امام ابنِ حجر ہیتمی رَحْمَۃُ اللّٰہِ عَلَیْہِ  فرماتے ہیں : اِنسان نے ناحق کسی چوپائے کو مارا یا اسے بھوکا پیاسا رکھا یا اس سے طاقت سے زیادہ کام لیا تو قِیامت کے دِن اس سے اسی کی مثل بدلہ لیا جائے گا جو اس نے جانور پر ظلم کیا یا اسے بھوکا رکھا۔ اس پر دَرجِ ذَیل حدیث ِ پاک دَلالت کرتی ہے۔ چُنانچِہ رَحمت ِ عالَم صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم نے جہنَّم میں ایک عورت کو اس حال میں دیکھا کہ  وہ لٹکی ہوئی ہے اور ایک بلّی اُس کے چہرے اور سینے کو نوچ رہی ہے اور اسے ویسے ہی عذاب دے رہی ہے جیسے اس(عورت) نے دُنیا میں قید کر کے اور بھوکا رکھ کر اسے تکلیف دی تھی۔ اِس رِوایت کا حکم تمام جانوروں کے حق میں عام ہے۔ (اَلزَّواجِر ، کتاب النفقات ، الکبیرة  الحادیة والخمسون ، ۲ / ۱۷۴ دار المعرفة  بیروت-جہنم میں لے جانے والے اَعمال ، ۲ / ۳۲۳ مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی)دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی اِدارے مکتبۃ المدینہ کی 1197 صَفحات پر مشتمل کتاب ، ’’بہارِ شریعت‘‘جلد سِوُم صفحہ 660 پر ہے : جانور پر ظُلم کرنا ذِمّی کافرپر(اب دُنیا میں سب کافر حَربی ہیں )ظلم کرنے سے زیادہ  بُرا  ہے اور ذِمّی پر ظلم کرنا مسلم پر ظلم کرنے سے بھی بُرا ہے کیوں کہ جانور کا کوئی مُعِین و مددگار اللہ(عَزَّ وَجَلَّ) کے سِوا نہیں اس غریب کو اس ظلم سے کون بچائے!‘‘(درمختار و ردالمحتار ، کتاب الحظر والاباحة ، فصل فی البیع ، ۹ / ۶۶۲ دار المعرفة  بیروت)  

[5]    احیاء العلوم ، کتاب ترتیب الاوراد و تفصیل احیاء اللیل ، الباب الثانی فی الاسباب المیسرة لقيام الليل...الخ  ، ۱ /  ۴۶۹ دار صادر بیروت-احیاء العلوم (مترجم) ، ۱ / ۱۰۶۲مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی

[6]    ابن ماجه ، کتاب الزھد ،  باب الحزن والبکاء ، ۴ / ۴۶۵ ، حدیث : ۴۱۹۳ دار المعرفة بيروت- مکاشفة القلوب ، الباب السادس والثمانون ،  ص۲۷۶ دار الکتب العلمية بيروت -مکاشفۃ القلوب (مترجم) ، ص۵۷۱مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی

[7]    مزید معلومات حاصِل کرنے کے لیے دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی اِدارے مکتبۃُ المدینہ کے رِسالے ، فیضانِ مَدَنی مذاکرہ (قسط : 40) ، بنام “ دِل کی سختی کے اَسباب و علاج “ کا مُطالعہ کیجیے۔ (شعبہ فیضانِ  مَدَنی مذاکرہ)       

[8]    معجم کبیر ، باب الصاد ، محمد بن زیاد الالھانی عن ابی امامة ، ۸ / ۱۱۴ ، حدیث : ۷۵۳۲  دار احیاء التراث العربی بیروت

[9]    مسلم ، کتاب المساجد ومواضع الصلاة  ، باب استحباب الذکر بعد الصلاة  وبيان صفته ،  ص ۲۳۷ ،  حديث : ۱۳۴۹- ۱۳۵۲ دار الکتاب العربی بیروت

[10]    مَشائخِ  کِرام کا یہ دَستور رہا ہے کہ اپنے مُریدین و طالبین کو ایک شجرہ شریف بھی عطا فرماتے ہیں جس میں دِیگر اَوراد و وَظائف کے ساتھ دُعائیہ اَشعار پر مشتمل شجرۂ عالیہ بھی ہوتا ہے ۔ اِن اَشعار میں سلسلۂ عالیہ کے تمام مَشائخ کے نام اِس تَرتیب سے لکھے ہوتے ہیں کہ سلسلہ نبیٔ اکرم صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم تک پہنچتا ہے۔ اَلْحَمْدُ لِلّٰہ شیخِ طریقت ، امیرِ اہلسنَّت ، بانیِ دعوتِ اسلامی حضرتِ علّامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطار قادری رضوی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے بھی اپنے مُریدین و طالبین کے لیے ایک بہت ہی پیارا رِسالہ “ شجرۂ قادریہ رضویہ ضیائیہ عطّاریہ “ مُرَتَّب فرمایا ہے۔ جس کے شروع میں “ شجرۂ قادریہ رَضویہ ضیائیہ عطّاریہ “ منظوم اَشعار کی صورت میں موجود ہے۔ اِس رسالے میں گناہوں سے بچنے ، کام اٹک جانے ، روزی میں بَرَکت پانے اور جادو ٹونے سے حفاظت کیلئے کیا پڑھنا چاہیے؟اِس طرح کے  کم و بیش 52 “ اَوراد و وَظائف “ لکھے ہیں۔ اِس رسالے کو دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی اِدارے مکتبۃُ المدینہ  سے ہدیۃ حاصِل کر کے اس کا مُطالعہ  کیجیے ۔ (شعبہ فیضانِ مَدَنی مذاکرہ) 



Total Pages: 7

Go To