Book Name:Islami Shadi

یہ مُنْصِف مناسب طریقے سے ان کے مسئلے کا حل نکال لیں گے اور اگر مُنْصِف ، میاں بیوی میں صلح کروانے کا ارادہ رکھتے ہوں تو اللہ تعالیٰ  ان کے مابین اتفاق پیدا کر دے گا اس لئے حتّی المقدور صلح کے ذریعے اس معاملے کو حل کیا جائے لیکن یہ یاد رکھیں کہ انہیں میاں بیوی میں جدائی کروادینے کا اختیار نہیں یعنی یہ جدائی کا فیصلہ کریں تو شَرْعاً ان میں جدائی ہوجائے ، ایسا نہیں ہوسکتا۔ ([1])

گھر ٹوٹنے کے اسباب و حل مع

طلاق سے مُتَعَلّق  مفید مدنی پھول

میاں بیوی کے اختلافات کے اسباب

میاں بیوی کو چاہئے کہ اپنے رشتے کو مضبوط بنانے اور اسے کسی بھی ممکنہ ٹھیس سے بچانے کے لئے ان اسباب کو ہمیشہ پیشِ نظر رکھیں جن کی وجہ سے عام طور پر میاں بیوی میں لڑائی جھگڑے ، اختلافات اور علیحدگیاں ہوتی ہیں آئیے بعض اسباب مُلاحَظہ کیجئے :

بیوی کی طرف سے ناشکری

بعض اوقات شوہر کے حق میں بیوی کا ناشکرا ہونا باہمی اختلاف کا سبب بنتا ہے کہ سُسرال کی اپنائیت اور شوہر کے اچھے سُلوک کے باوُجُود بیوی ہٹ دھرمی کا مُظاہَرہ کرتی ہے ، شوہر سے نِت نئے مطالبےکرتی ، شوہر کی آمدنی میں گُزارہ نہ ہونے کا رونا روتی ، چادر سے زیادہ پاؤں پھیلاتی ، اونچے اونچے خواب دیکھتی اور میکے جاکر سُسرال کی شکایات کرنا اپنی عادت بنا لیتی ہے یہ وہ عوامل ہیں جو محبت کی مضبوط دیوار میں دراڑ پیدا کردیتے ہیں ۔

شوہر کی طرف سے بداَخلاقی کا سُلوک

بعض اوقات بیوی کے حق میں شوہر کا بد اَخلاق ہونا اختلافات کا سبب بنتا ہے ، شوہر اگر بیوی کے سامنے سُسرال کی بُرائی کرتا رہے ، اس کے ماں باپ اور بہن بھائیوں کو بُرا کہے ، بات بات پر بیوی کو جِھڑکے اور گالیاں دے ، طعن وتَشْنِیع کرے ، بلاوجہ اُس پر سختی کرے ، صرف اپنی پسند کو ترجیح دے اور بیوی کی پسند کو کوئی اہمیَّت نہ دےتو اس کی یہ مسلسل بداَخلاقی بیوی کے دل میں نفرت کا زہر گھول دیتی اور ان کے درمیان اختلافات کا سنگِ بُنیاد رکھ دیتی ہے۔

بیوی کی خود فراموشی

گھر ٹوٹنے کا ایک سبب بیوی کا اپنے آپ سے بے پروائی برتنا بھی ہے۔ بعض خواتین اپنے شوہر کی خدمت ، گھر کی نظافت اور بچّوں کی نگہداشت میں تو کسر نہیں چھوڑتیں مگر خود سے اس قدر بیگانگی کا مُظاہَرہ کرتی ہیں کہ انہیں نہ اپنے کپڑوں کی نظافت کا خیال رہتا ہے اور نہ شوہر کی خاطر زینت اختیار کرنے کا ہوش ، اُجڑا چہرہ ، بکھرے بال اور بے سلیقہ کپڑے دیکھ دیکھ کر بالآخر شوہر کا  دل اس سے بیزاری اور نفرت محسوس کرنے لگتا ہے ایسی صورت میں ان کے درمیان اختلافات اور لڑائی جھگڑے نہیں ہونگے تو اور کیا ہوگا۔

شوہر کے معاملات میں بے جا مُداخلت

اختلاف کا ایک سبب یہ بھی ہے کہ بیوی  اپنے شوہر کے کہیں آنے جانے پر  روک ٹوک کرتی ، بلا وجہ اُس سے اس کی کمائی کا حساب مانگتی اور اَخْراجات کے بارے میں غیر ضروری پوچھ گچھ کرتی ہے اس سے عموماً شوہر کو چِڑ پیدا ہو جاتی ہے اور اُس پر غیرت سوار ہو جاتی ہے کہ میری بیوی مجھ پر حکومت جتاتی ، میری آمدنی اور  خرچ کا مجھ سے حساب طلب کرتی ہے! اس چڑچڑے پن کا نتیجہ بھی لڑائی جھگڑے کے سوا کچھ نہیں ۔

حاسدین سے غفلت

          گھر ٹوٹنے کا ایک سبب یہ ہوتا ہے کہ میاں بیوی اپنے اردگرد کے ماحول کو نظر انداز کردیتے اور اپنے حاسدین سے غافل ہوتے ہیں جس کا نتیجہ یہ نکلتا ہےکہ جب حاسدین میاں بیوی کو ایک دوسرے کے خِلاف بھڑکاتے ہیں تو وہ کسی تحقیق کے بغیر اپنے رفیقِ سفر کے مُخالف ہوجاتے اور ایک دوسرے پر برس پڑتے ہیں یوں ان کی محبت اور اتفاق ،  حسد کی نذر ہو جاتا ہے۔ لہٰذا میاں بیوی کو چاہئے کہ اپنے خیر خواہوں اور بد خواہوں کی پہچان رکھیں اور بدخواہوں کی طرف سے



[1]   تفسیرصراط الجنان ، پ۵ ، النساء : تحت الآیۃ : ۳۵ ، ۲ / ۱۹۹



Total Pages: 74

Go To