Book Name:Aey Iman Walo (89 Ayat e Qurani)

شدت و سختی نہ کریں اور قاتل سے فرمایا کہ وہ خون بہاکی ادائیگی میں اچھا طریقہ اختیار کرے  ۔  آیت میں قاتل اور مقتول کے وارث کو بھائی کہا گیا اس سے معلوم ہوا کہ قتل اگرچہ بڑاگناہ ہے مگر اس سے ایمانی بھائی چارا ختم نہیں ہوجاتا ۔  اس میں خارجیوں کے مذہب کی تردید ہے جو کبیرہ گناہ کے مرتکب کو کافر کہتے ہیں ۔ اہلسنّت کا عقیدہ یہ ہے کہ گناہ ِ کبیرہ کا مرتکب فاسق ہوتا ہے کافر نہیں ۔

قصاص سے متعلق دواہم مسائل :  

(1)… مقتول کے ولی کو اختیار ہے کہ خواہ قاتل کو بغیر عوض معاف کردے یامال پر صلح کرے اوراگر وہ اس پر راضی نہ ہو اور قصاص چاہے تو قصاص ہی فرض رہے گا ۔  (جمل، البقرة، تحت الاٰية :  ۱۷۸ ، ۱ / ۲۱۳)

(2)…اگر مال پر صلح کریں تو قصاص ساقط ہوجاتا ہے اور مال واجب ہوتا ہے ۔ (تفسیرات احمدیه، البقرة، تحت الاٰية :  ۱۷۸، ص۵۲)

مزید تفصیلات کیلئے بہارِ شریعت حصہ 17کا مطالعہ فرمائیں ۔

( فَمَنِ اعْتَدٰى بَعْدَ ذٰلِكَ :  تو جو اس کے بعد زیادتی کرے ۔ )یعنی دستورِ جاہلیت کے مطابق غیر ِقاتل کو قتل کرے یادِیَت قبول کرنے اور معاف کرنے کے بعد قتل کرے تو اس کیلئے دردناک عذاب ہے ۔ (تفسیر مدارک، البقرة، تحت الاٰية :  ۱۷۸، ص۹۵)

(05)

روزوں کی فرضیت کا بیان

یٰۤاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا كُتِبَ عَلَیْكُمُ الصِّیَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِیْنَ مِنْ قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُوْنَۙ(۱۸۳)

ترجمۂ کنزُالعِرفان :  اے ایمان والو!تم پر روزے فرض کیے گئے جیسے تم سے پہلے لوگوں پر فرض کئے گئے تھے تا کہ تم پرہیز گار بن جاؤ ۔ (البقرۃ : ۱۸۳)

( كُتِبَ عَلَیْكُمُ الصِّیَامُ :  تم پر روزے فرض کیے گئے ۔ ) اس آیت میں روزوں کی فرضیت کا بیان ہے ۔ ’’شریعت میں روزہ یہ ہے کہ صبح صادق سے لے کر غروب آفتاب تک روزے کی نیت سے کھانے پینے اور ہم بستری سے بچا جائے ۔ ‘‘ (خازن، البقرة، تحت الاٰية :  ۱۸۳، ۱ / ۱۱۹)

 روزہ بہت قدیم عبادت ہے :

            اس آیت میں فرمایا گیا ’’جیسے تم سے پہلے لوگوں پر فرض تھے ۔ ‘‘ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ روزہ بہت قدیم عبادت ہے ۔  حضرت آدم عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام سے لے کرتمام شریعتوں میں روزے فرض ہوتے چلے آئے ہیں اگرچہ گزشتہ امتوں کے روزوں کے دن اور احکام ہم سے مختلف ہوتے تھے  ۔  یاد رہے کہ رمضان کے روزے 10 شعبان 2ہجری میں فرض ہوئے تھے ۔ (در مختار، کتاب الصوم، ۳ / ۳۸۳)

 روزے کا مقصد :

            آیت کے آخر میں بتایا گیا کہ روزے کا مقصد تقویٰ و پرہیزگاری کا حصول ہے ۔  روزے میں چونکہ نفس پر سختی کی جاتی ہے اور کھانے پینے کی حلال چیزوں سے بھی روک دیا جاتا ہے تو اس سے اپنی خواہشات پر قابو پانے کی مشق ہوتی ہے جس سے ضبط ِنفس اور حرام سے بچنے پر قوت حاصل ہوتی ہے اور یہی ضبط ِ نفس اور خواہشات پر قابو وہ بنیادی چیز ہے جس کے ذریعے آدمی گناہوں سے رکتا ہے ۔  قرآن پاک میں ہے :

وَ اَمَّا مَنْ خَافَ مَقَامَ رَبِّهٖ وَ نَهَى النَّفْسَ عَنِ الْهَوٰىۙ(۴۰) فَاِنَّ الْجَنَّةَ هِیَ الْمَاْوٰىؕ(۴۱) (نازعات : ۴۰، ۴۱)

ترجمۂ کنزُالعِرفان :  اور وہ جو اپنے رب کے حضور کھڑے ہونے سے ڈرا اور نفس کو خواہش سے روکا ۔ تو بیشک جنت ہی ٹھکانا ہے ۔

حضرت عبداللہبن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے ، رسولُ اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا :  ’’اے جوانو! تم میں جوکوئی نکاح کی استطاعت رکھتا ہے وہ نکاح کرے کہ یہ اجنبی عورت کی طرف نظر کرنے سے نگاہ کو روکنے والا ہے اور شرمگاہ کی حفاظت کرنے والا ہے اور جس میں نکاح کی استطاعت نہیں وہ روزے رکھے کہ روزہ قاطعِ شہوت ہے ۔ (بخاری، کتاب النکاح، باب من لم یستطع الباءة فلیصم، ۳ / ۴۲۲، الحدیث :  ۵۰۶۶)

(06)

اسلامی احکام کی مکمل پیروی کرنے کا حکم

یٰۤاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوا ادْخُلُوْا فِی السِّلْمِ كَآفَّةً۪-وَ لَا تَتَّبِعُوْا خُطُوٰتِ الشَّیْطٰنِؕ-اِنَّهٗ لَكُمْ عَدُوٌّ مُّبِیْنٌ(۲۰۸)

ترجمۂ کنزُالعِرفان :  اے ایمان والو!اسلام میں پورے پورے داخل ہوجاؤ اور شیطان کے قدموں پر نہ چلو بیشک وہ تمہارا کھلا دشمن ہے ۔ (البقرۃ : ۲۰۸)

( اُدْخُلُوْا فِی السِّلْمِ كَآفَّةً۪- :  اسلام میں پورے پورے داخل ہوجاؤ ۔ )شانِ نزول :  اہلِ کتاب میں سے حضرت عبداللہبن سلام رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ اور ان کے اصحاب،



Total Pages: 97

Go To