Book Name:Intiqal Par Sabar Ka Tariqa

قرآن بھی تھے ۔ دَورانِ اِجتماع یہ بے چارے اُٹھ کر باہر گئے ۔ رات کے اندھىرے مىں یہ پانچوں کہىں ٹرىن کى پٹرى پر جا بیٹھے ۔ اچانک ٹرىن آئى  تو ان میں سے ایک تو بچ گیا جو پٹرى پر نہىں ہو گا یا آگے پىچھے ہٹ گیا ہو گا لیکن باقی چاروں کے اوپر سے ٹرىن گزر گئى ، کسى کے ہاتھ کٹ گئے ، کسى کى گردن کٹ گئى، اَعضا کے ٹکڑے ہو گئے اور چاروں بے چارے نوجوانی میں وفات پا گئے ۔ اِنَّا لِلہِ وَاِنَّاۤ اِلَیۡہِ رٰجِعُوۡنَ ۔ یہ حادثہ علاقہ انصارى چوک مدىنۃ الاولىا(ملتان شریف)مىں ہوا ۔  

وفات پانے والے چار اسلامی بھائیوں کے نام اور عمر کی تفصیل کچھ یوں ہے : محمد على عطارى (عمر 18 سال)، عمىر عطارى بن محمد جاوىد(عمر 19 سال)، حافظ محمد ذىشان عطارى بن خادم حسىن (عمر 18 سال)، عبدالوہاب عطارى بن  محمد رمضان (عمر 15 سال) ۔   

مَرحومین کے لیے اِیصالِ ثواب و دُعائے مَغفرت

ان کے عزىز و اقربا سوگوار ہىں، ظاہر ہے بے چاروں پر  قىامت ٹوٹ پڑى ہو گى بلکہ  پورے علاقے مىں کہرام مچ گىا ہو گا ۔  بتاىا گیا ہے کہ چاروں جنازے اکٹھے اُٹھے اور لوگوں کا اتنا اِزدحام تھا کہ نمازِ جنازہ کا تارىخى اِجتماع ہوا ۔  ہم سب دُعاگو ہیں : یااللہ!تجھے پىارے حبىب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کا واسطہ! مَرحوم محمد على، عمىر، حافِظ ذِىشان اور عبدُالوہاب کو غرىقِ رَحمت فرما ۔ ٭ اے اللہ! ان کے چھوٹے بڑے گناہ مُعاف کر دے  ۔ ٭پَروردگار!انہىں بے حساب مغفرت سے مُشَرَّف فرما کر جن کا جَشنِ مىلاد مَنانے آئے تھے اسى مىلاد والے آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کا جنَّتُ الفردوس مىں پڑوس عطا فرما ۔ ٭ اِلٰہَ الْعٰلَمِیْن!ان کے جو بھى سوگوار ہىں سب کو صبرِِ جمىل اور صبرِِ جمىل پر  اجرِ عظىم مَرحمت فرما ۔  ٭ ىااللہ!مىرے پاس جو کچھ ٹوٹے پھوٹے اَعمال ہىں اپنے فضل وکَرم سے انہىں قبول کرکے اپنے کَرم کے شاىانِ شان اَجر عطا فرما ۔ ٭ىہ سارا ثواب جنابِ رسالت مآب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کو عطا فرما ۔  بوسىلۂ رَحْمَةٌ  لِّلْعَالَمِیْنصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم محمد على، عمىر، حافظ محمد ذِىشان اور عبدالوہاب سمىت سارى اُمَّت کو عناىت فرما ۔ اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِىِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  

مَرحومین کے لَواحقین سے تعزیت

مىں ان چاروں مَرحومىن کے سوگواران سے تعزىت کرتا ہوں ۔  واقعى آپ پر غم کے پہاڑ ٹوٹے  ہیں  لىکن جتنا صَدمہ زىادہ اتنا صبر دُشوار ہوتا ہے اور جتنا صبر دُشوار ہوگا، عمل دُشوار ہوگا تو اِنْ شَآءَ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ ىہ قىامت کے دِن مىزانِ عمل (یعنی ترازو) مىں اتنا ہی وزن دار ہو گا، اِنْ شَآءَاللّٰہ عَزَّوَجَلَّ ثواب زىادہ ملے گا  ۔ اللہ کرے کہ سب لَواحقین کو صبر نصىب ہو جائے  ۔ ظاہر ہے کہ ماں باپ کے لىے تو جوان موت ہے  ۔ ان بے چاروں کى جو کىفىات ہوں گى خود سمجھتے ہوں گے  ۔ بس آپ ہمت رکھیے  اور یہ سوچ کر صبر کىجیے کہ اللہ پاک کى جو مرضى ہوئی وہ ہوا ۔

اِیصالِ ثواب کے لیے مَدَنی قافلے میں سفر

اِن مَرحومین کے علاقے کے اسلامى بھائىوں سے خُصُوصاً اور مدىنۃُالاولىا ملتان شریف کے اسلامى بھائىوں سے عموماً یہ مَدَنی اِلتجا ہے کہ ىہ چاروں بے چارے جوانى مىں چلے گئے ، اب ان کے اِىصالِ ثواب کے لىے صِرف تىن دِن کے مَدَنى قافلے کا مىرى طرف سے سُوال ہے لہٰذا اسى ماہِ مىلاد  مىں تىن دِن کے مَدَنى قافلوں مىں سفر کیجئے ۔ ان کے والد، بھائیوں اور دِیگر خاندان والوں کو بھى چاہىے کہ اپنے مَرحومین کے اِىصالِ ثواب کے لىے اس تىن دِن کے مَدَنى قافلے مىں سفر کرىں ۔  آپ کو بھى ثواب ملے گا اور اِنْ شَآءَ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ ان چاروں کا بھى بىڑا پار ہوگا ۔

اِیصالِ ثواب کے لیے مسجد کی تعمیر   

اِن چاروں کے عزىزوں میں سے کوئی اکیلا یا سب مل کر اِن چاروں کے اِىصالِ ثواب کى نىت سے اىک مسجد بھى بنا دىں ۔  جن کو اللہ پاک نے دىا ہے تو وہ مَرحومین سے اپنی محبت کو عملی جامہ پہناتے ہوئے پیسہ بھی نکالیں اور مسجد بھی بنائىں ۔ چونکہ مىلاد کى رات ان بے چاروں کا اِنتقال ہوا ہے لہٰذا مسجد کا نام

 ”فىضانِ مىلاد“رکھ لىں ۔ اِنْ شَآءَاللّٰہ عَزَّوَجَلَّ ىہ ثوابِ جارىہ آپ لوگوں کے لىے بھى ہوگا اور ان کے اىصالِ ثواب کى نىت ہوگى تو ان چاروں کا بھى بىڑا پار ہوگا ۔  اِس سے دعوتِ اسلامى کى بھى نىک نامى ہوگى کہ عام لوگ ناچ گانوں مىں مَرتے ہىں، فلمیں ڈرامے دیکھتے ہوئے مَرتے ہىں ، خدا جانے کہاں کہاں مَرتے ہىں اور پھر ان کے لیے اِىصالِ ثواب بھی کچھ نہىں ہوتا جبکہ دعوتِ اسلامى والے چار فوت ہوئے تو اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ دعوتِ اسلامى والوں نے اللہ کى رَحمت سے اىسے اىسے اِىصالِ ثوا ب کى ترکىبىں کىں ۔   

فوتگی پر بولے جانے والے کفریات

 



Total Pages: 14

Go To