Book Name:Aghwa Se Hifazat Kay Aurad

سُوال : نمازِ جنازہ مىں سَلام ہاتھ چھوڑ کر پھىرنا چاہیے ىا ہاتھ باندھے ہوئے بھی پھىر سکتے ہىں؟( ہند سے سُوال )

جواب : نمازِ جنازہ مىں سَلام ہاتھ چھوڑ کر پھىرنا چاہیے ۔ پہلے ہاتھ چھوڑنے ہیں پھر سلام پھىرنا ہے ۔

مَرنے کے بعد اِنسان  کى رُوح کہاں رہتى ہے ؟

سُوال : کىا اِنسان کى رُوح ہمىشہ قبر مىں رہتى ہے ؟( ہند سے سُوال )

جواب : رُوحوں کے مَقام حَسبِ مَراتِب جُدا ہیں ۔ بعض غیرمُسلموں کی رُوحیں ان کے مَرگھٹ میں قید ہوتی ہیں تو بعض کی  دِیگر مَقامات پر ۔ اِسی طرح مسلمانوں کی رُوحوں کے بھی مختلف مَقامات ہیں بعض مُؤمنین کی رُوحیں ان کی قبر کے پاس رہتی ہیں تو بعض کی رُوحیں آبِ زَمزم کے  کنوئیں مىں  اور اَنبیائے کِرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ  وَالسَّلَام اور اَولیائے کِرام رَحِمَہُمُ اللّٰہُ  السَّلَام اور وہ مسلمان جن پر اللہ عَزَّوَجَلَّ  کرم فرمائے گا ان کی رُوحیں اَعلىٰ عِلِّیِّیۡن  میں ہوتی ہیں ، ىہ سب سے اَعلىٰ دَرجے کا مَقام ہے ، جس کا جىسا مَرتبہ ہوتا ہے اس کے مُطابق اس کی رُوح کا  مَقام بھی ہوتا ہے ۔ ( [1])

بہرحال رُوح مسلمان کی ہو یا غیر مُسلم کی اس کا اپنے بَدن سے تعلق باقی رہتا ہے اگرچہ بَدن گل سڑ جائے ۔  ” عَجبُ الذَّنب “اىک معمولى ذَرَّہ ہوتا ہے جو خوردبىن سے بھى نظر نہىں آتا ، نہ اسے  آگ جَلا سکتى ہے اور نہ ہی زمىن اسے  گلا سکتى ہے ، یہ ذَرَّہ باقى رہتا ہے ، اسی سے  بَدن کى دوبارہ تَرکیب ہو گى ، اس کے ساتھ رُوح کا تعلق باقی  رہتا ہے ۔ ( [2])  

دو پیروں کا مُرید ہونے والاکِس کا مُرید کہلائے گا؟

سُوال : اگر کوئى شخص دو پىروں کا مُرىد ہوا  تو وہ ان دونوں میں سے  کس کا مُرىد کہلائے گا؟ ( بہاولپور سے سُوال )

جواب : پہلے جس کا مُرىد ہوا تھا اگر اس کى بىعت نہىں توڑى تھى ىا اس سے عقىدت ختم نہىں ہوئى تھى تو اسى کا مُرىد ہے ۔

ایک مُرید کے دو پیر نہیں ہو سکتے

سُوال : کیا اىک وقت مىں دو پىر رکھ سکتے ہىں؟

جواب : اعلىٰ حضرت ، امامِ اہلِسنَّت مولانا شاہ امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن نے اس کی مِثال  دی ہے کہ جس طرح  اىک عورت کے ( بیک وقت) دو شوہر نہىں ہو سکتے ایسے ہی اىک مُرىد کے دو پىر نہىں ہو سکتے ۔ ( [3])  

مَدَنی مذاکر ے کے دَوران آپ  کیا پیتے ہیں؟

سُوال : آپ مَدَنی مذاکرے کے دَوران مٹی کے پیالے میں کیا پیتے ہیں؟ ( سوشل میڈیا   کا سُوال)

جواب : جب میں مَدَنی مذاکرے کے لیے آتاہوں تو عموماً چائے پیتا ہوں پھر کچھ دیر بعد پانی پیتا ہوں ۔ اگر مَدَنی مذاکرہ کافی دیر تک جاری رہتا ہے تو طاقت کا شربت پیتا ہوں ۔ عموماً ڈاکٹر حضرات مریضوں کو یہ شربت  پینے کا مشورہ دیتے ہیں ۔ لہٰذا کوئی بھی اسلامی بھائی ڈاکٹر کے مشورے  کے بغیر ایسا کوئی شربت اِستعمال نہ کرے ۔

تبلیغِ دِین میں مَساجد کا کِردار

سُوال : دِینِ متین کی ترویج و  اِشاعت میں مَساجد کا بہت بڑا کِردار ہے ، دعوتِ اسلامی کی مجلس  ” امامت کورس “  منبر و محراب کو مَضبوط کر کے  مَساجد کے ذَریعے محلے میں  عشقِ رَسول کی خوشبوؤں کو عام کرنے کے مُقَدَّس جذبے کے تحت  پانچ ماہ ، دس ماہ کے اِمامت کورس کا اِہتمام  کرتی ہے ۔ دُنیا بھر میں اِمامت کورس کے دَرَجات بڑھانے کے لیے کثیر اَساتذہ کی ضَرورت ہے اس سلسلے میں 14اکتوبر 2018 بروز اِتوار سے عالَمی مَدَنی مرکز فیضانِ مَدینہ بابُ المَدینہ ( کراچی) میں 12دن کا مُعلمِ اِمامت کورس شروع کیا جارہا ہے جس میں جامِعاتُ المدینہ کے فارِغُ التحصیل مَدَنی اِسلامی بھائی اور تجوید و قرأت  پڑھے ہوئے عاشِقانِ رَسول داخِلہ لے سکیں گے ۔ اَمیرِ اہلسنَّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی بارگاہ میں عرض ہے کہ اِمامَت کی اَہمیت پر کچھ مَدَنی پھول بھی بیان فرمادیجیے اور عاشقان ِرَسول کو اپنی زبانِ فیض رساں سے 14اکتوبر 2018 سے شروع ہونے والے اِمامت  کورس کی تَرغیب بھی دِلادیجیے ۔ ( رُکنِ شوریٰ کا سُوال)

جواب : سُبْحٰنَ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ سُوال کے اندر ہی دعوت بھی دے دی گئی ہے اور امامت کی اَہمیت کو بھی بہت خوبصورت اَلفاظ میں بیان کیا گیا ہے  کہ ہمیں امام  اس لیے



[1]    اعلیٰ حضرت عَلَیْہِ رَحْمَۃُرَبِّ الْعِزَّت فرماتے ہیں : رُوح کا مقام بعدِ موت حَسبِ مَراتب مختلف ہے ۔ مسلمانوں میں بعض کی رُوحیں قبر پر رہتی ہیں اور بعض کی چاہِ زَمزم میں اور بعض کی آسمان و زمین کے دَرمیان  اور بعض آسمانِ اَوَّل دُوُم ہفتم تک ا ور بعض اَعلىٰ عِلِّیِّیۡن میں اور بعض سبز پرندوں کی شکل میں زیرِ عرش نُور کی قندیلوں میں ۔ کفّار میں بعض کی رُوحیں چاہ وادیٔ بَرہوت میں ، بعض کی زمینِ دُوُم سِوُم ہفتم تک ، بعض سِجِّیْن میں ۔ ( فتاویٰ رضویہ ، ۹ / ۶۵۸)

[2]    بہارِ شریعت ، ۱ / ۱۱۲ ، حصّہ : ۱  مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی 

[3]    فتاویٰ رضویہ ، ۲۱ / ۶۰۳



Total Pages: 13

Go To