Book Name:Saman-e-Bakhsish

آنکھوں میں مری تو آ اور دل میں مرے بس جا

دل شاد مجھے فرما اے جلوۂ جانانہ

آباد اسے فرما وِیراں ہے دل نوریؔ

جلوے تیرے بس جائیں آباد ہو ویرانہ

سرکار ([1])کے جلووں سے روشن ہے دلِ نوریؔ

تا حشر رہے روشن نوریؔ کا یہ کاشانہ

 

کرم جو آپ کا اے سید ابرار ہوجائے

کرم جو آپ کا اے سیدِ اَبرار ہوجائے

تو ہر بدکار بندہ دَم میں نیکوکار ہوجائے

جو مومن دیکھے تم کو محرم اَسرار ہوجائے

جو کافر دیکھ لے تم کو تو وہ دِیں دار ہوجائے

جو سر رکھ دے تمہارے قدموں پہ سردارہوجائے

جو تم سے سر کوئی پھیرے ذلیل و خوار ہوجائے

جو ہوجائے تمہارا اس پہ حق کا پیار ہوجائے

بنے   اللّٰہ   والا   وہ    جو   تیرا    یار   ہوجائے

اگر آئے وہ جانِ نور میرے خانۂ دل میں

مہ و خاوَر مرا گھر مَطلَعِ اَنوار ہوجائے

غم و رَنج و اَلم اور سب بلاؤں کا مَداوا ہو

اگر وہ گیسوؤں والا مرا دِلدار ہوجائے

 

عنایت سے مرے سر پر اگر وہ کفشِ پا رکھ دیں

یہ بندہ تاجداروں کا بھی تو سردار ہوجائے

 



[1]      مولوی عبدالحمید صاحب رضوی افریقی یہ نعت پاک حضور مفتیٔ اعظم ہند قبلہ قُدِّسَ سِرُّہٗ کی مجلس میں پڑھ رہے تھے ، جب یہ مقطع پڑھا تو حضرت قبلہ نے فرمایا کہ بِحَمْدِہٖ تَعَا لٰی فقیر کا دل تو روشن ہے اب اس کو یوں پڑھو:  

؎     آباد اُسے فرما ویراں ہے دلِ نجدی

            جانشینِ مفتیٔ اعظم ہند علامہ مفتی شاہ اختر رضا خاں صاحب قبلہ نے برجستہ عرض کیا مقطع کو اس طرح پڑھ لیا جائے :

سرکار کے جلوؤں سے روشن ہے دلِ نوری

تا حشر رہے روشن نوری کا یہ کاشانہ

حضرت قبلہ نے پسند فرمایا۔  (امانت رضوی غُفِرَلَہ)



Total Pages: 123

Go To