Book Name:Saman-e-Bakhsish

شفیعِ مُجرِماں پیشِ خدا تنہا شہا تم ہو

گرفتارِ بلا حاضر ہوئے ہیں ٹوٹے دل لے کر

کہ ہر بے کل کی کل ٹوٹے دلوں کا آسرا تم ہو

خبر لیجے خدارا میرے مولیٰ مجھ سے بے کس کی

کہ ہر بے کس کے کس بے بس کے بس روحی فدا تم ہو

مُسَلَّط کردیا تم کو خدا نے اپنے غیبوں پر

نبی مجتبیٰ تم ہو رسولِ مرتضیٰ تم ہو

چمک جائے دلِ نوریؔ تمہارے پاک جلوؤں سے

مٹادو ظلمتیں دِل کی مرے نورُالہدیٰ تم ہو

 

تو شمع رسالت ہے عالم تیرا پروانہ

تو شمعِ رسالت ہے عالم تیرا پروانہ

تو ماہِ نبوت ہے اے جلوۂ جانانہ

جو ساقیٔ کوثر کے چہرے سے نقاب اُٹھے

ہر دل بنے مے خانہ ہر آنکھ ہو پیمانہ

دل اپنا چمک اُٹھے ایمان کی طلعت سے

کر آنکھیں بھی نورانی اے جلوۂ جانانہ

سرشار مجھے کردے اِک جامِ لبالب سے

تا حشر رہے ساقی آباد یہ مے خانہ

تم آئے چھٹی بازی رونق ہوئی پھر تازی

کعبہ ہوا پھر کعبہ کر ڈالا تھا بت خانہ

مستِ مئے اُلفت ہے مَدہوشِ محبت ہے

فرزانہ ہے دیوانہ دیوانہ ہے فرزانہ

 

میں شاہ نشیں ٹوٹے دل کو نہ کہوں کیسے

ہے ٹوٹا ہوا دل ہی مولیٰ ترا کاشانہ

کیوں زُلفِ مُعَنْبَر سے کوچے نہ مہک اُٹھیں

ہے پنجۂ قدرت جب زُلفوں کا تری شانہ

 



Total Pages: 123

Go To