Book Name:Saman-e-Bakhsish

عیاں ہے کف کی طرح نزد و دُور آنکھوں میں

مئے محبت محبوب سے یہ ہیں سر سبز

بھری ہوئی ہے شرابِ طُہُور آنکھوں میں

ہوا ہے خاتمہ اِیمان پر ترا نوریؔ

جبھی ہیں خلد کے حور و قصور آنکھوں میں

 

کچھ ایسا کردے مرے کردگار آنکھوں میں

کچھ ایسا کردے مرے کردگار آنکھوں میں

ہمیشہ نقش رہے رُوئے یار آنکھوں میں

نہ کیسے یہ گل و غنچے ہوں خوار آنکھوں میں

بسے ہوئے ہیں مَدینے کے خار آنکھوں میں

بسا ہوا ہے کوئی گل عذار آنکھوں میں

کھلا ہے چار طرف لالہ زار آنکھوں میں

ہوا ہے جلوہ نما گل عذار آنکھوں میں

خزاں کے دَور میں پھولی بہار آنکھوں میں

سرور و نور ہو دل میں بہار آنکھوں میں

جو خواب میں کبھی آئے نگار آنکھوں میں

وہ نور دے مرے پروردَگار آنکھوں میں

کہ جلوہ گر رہے رُخ کی بہار آنکھوں میں

 

نظر ہو قدموں پر ان کے نثار آنکھوں میں

بنائیں اپنا ہوں وہ رہ گزار آنکھوں میں

نہ اک نگاہ ہی صدقہ ہو دل بھی قرباں ہو

کرم کرے تو وہ ناقہ سوار آنکھوں میں

بصر کے ساتھ بصیرت بھی خوب روشن ہو

لگاؤں خاکِ قدم بار بار آنکھوں میں

تمہارے قدموں پہ موتی نثار ہونے کو

ہیں بے شمار مری اَشکبار آنکھوں میں

نظر نہ آیا قرارِ دِلِ حزیں اب تک

 



Total Pages: 123

Go To