Book Name:Saman-e-Bakhsish

ہُوں گناہوں کے مَرَض سے نیم جاں    دردِ عصیاں کی دوا درکار ہے

ہاتھ پھیلا کر مُرادیں مانگ لو              سائلو ان کا سخی دربار ہے

اِن شاءَ اللّٰہ مغفرت  ہو جائے گی         اے وَلی ! تیری دعا درکار ہے

خوب خدمت سنّتوں کی میں کروں      سیِّدی تیری دعا درکار ہے

کاش نوریؔ کے سگوں میں ہو شمار     یہ تمنائے دلِ عطارؔ ہے

 

سامانِ بَخشِش

 

قلب کو اس کی رُویت کی ہے آرزو

 اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ    

قلب کو اُس کی رُویت کی ہے آرزو

جس کا جلوہ ہے عالم میں ہر چار سو

بلکہ  خود  نفس  میں  ہے  وہ   سُبْحٰنَہٗ

عرش پر ہے مگر عرش کو جستجو

اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ

عرش و فرش و زَمان و جہت اے خدا

جس طرف دیکھتا ہوں ہے جلوہ ترا

ذَرّے ذَرّے کی آنکھوں میں تو ہی ضیا

قطرے قطرے کی تو ہی تو ہے آبرو

اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ

تو کسی جا نہیں اور ہر جا ہے تو

تو منزہ مکاں سے مبرہ ز سو

علم و قدرت سے ہر جاہے تو کو بکو

تیرے جلوے ہیں ہر ہر جگہ اے عفو

 

اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ     اللّٰہ    

 



Total Pages: 123

Go To