Book Name:Saman-e-Bakhsish

کچھ ایسا گما دے محبت میں اپنی

کہ خود کہہ اُٹھوں میں منم غوثِ اعظم

جسے چاہے جو دے جسے چاہے نہ دے

ترے ہاتھ میں ہے نِعَم  غوثِ اعظم

 

ترا حسن نمکیں بھرے زخم دل کے

ِبنہ مرہمے بَر دَِلم غوثِ اعظم

ترقی کرے روز و شب دَردِ اُلفت

نہ ہو قلب کا دَرد کم غوثِ اعظم

خدا رکھے تم کو ہمارے سروں پر

ہے بس اِک تمہارا ہی دَم غوثِ اعظم

 

دمِ نزع سرہانے آجاؤ پیارے

تمہیں دیکھ کر نکلے دَم غوثِ اعظم

تری دِید کے شوق میں جانِ جاناں

کھنچ آیا ہے آنکھوں میں دم غوثِ اعظم

کوئی دَم کے مہماں ہیں آجاؤ اس دَم

کہ سینے میں اَٹکا ہے دم غوثِ اعظم

دمِ نزع آؤ کہ دم آئے دم میں

کرو  ہم  پہ    یٰس دم  غوثِ  اعظم

یہ دل یہ جگر ہے یہ آنکھیں یہ سر ہے

جہاں چاہو رکھو قدم غوثِ اعظم

سرِ ُخود َبہ شمشیرِ اَبرو فروشم

بَمِژگانِ تو سینہ اَم غوثِ اعظم

 َبہ پیکانِ تِیرت جگر ِمی فروشم

 َبہ تیرِ نگا َہت دَِلم غوثِ اعظم

 

دِماغم رَسد بَر سرِ عرشِ اعلیٰ

 



Total Pages: 123

Go To