Book Name:Saman-e-Bakhsish

خورشیدِ تاباں بھیک کو آیا تری سرکار سے

ہے نور سے کاسہ بھرا ماہِ عجم مہرِ عرب

خورشید کے سر آ پ کے دَر کی گدائی سے رہا

سہرا شہا اَنوار کا ماہِ عجم مہرِ عرب

کاسہ لیسی سے ترے دَربار کی مہتاب بھی

کیسا منوّر ہوگیا ماہِ عجم مہرِ عرب

 

ہیں یہ زمین و آسماں منگتا اسی سرکار کے

ہے ان کی آنکھوں کی ضیا ماہِ عجم مہرِ عرب

یوں بھیک لیتا ہے دو وَقتہ آسماں اَنوار کی

صبح و مسا ہے جبہ سا ماہِ عجم مہرِ عرب

اس جبہ سائی کے سبب شب کو اسی سرکار نے

انعام میں ٹیکا دیا ماہِ عجم مہرِ عرب

اور صبح کو سرکار سے اس کو مِلا نوری صلہ

عمدہ سا جھومر پُرضیا ماہِ عجم مہرِ عرب

جب تم نہ تھے کچھ بھی نہ تھا جب تم ہوئے سب کچھ ہوا

ہے سب میں جلوہ آپ کا ماہِ عجم مہرِ عرب

اِک ظلمتِ عصیاں شہا اس پر اَندھیرا قبر کا

کردے ضیا بدرالدجیٰ ماہِ عجم مہرِ عرب

بَرتوشوَد اَز نورِ رب بارانِ نوری روز و شب

ہو تا اَبد یہ سلسلہ ماہِ عجم مہرِ عرب

ہو مرشدوں پر نورِ جاں بارِش تمہارے نور کی

اور ان سے پائے یہ گدا ماہِ عجم مہرِ عرب

بے شک ہے عاصی کے لیے ناری صلہ لیکن شہا

نوریؔ کو دو نوری جزا ماہِ عجم مہرِ عرب

 

ان کو دیکھا تو گیا بھول میں غم کی صورت

ان کو دیکھا تو گیا بھول میں غم کی صورت

یاد بھی اب تو نہیں رَنج و اَلم کی صورت

خواب میں دیکھوں اگر دافِعِ غم کی صورت

پھر نہ واقع ہو کبھی رَنج و اَلم کی صورت

 



Total Pages: 123

Go To