Book Name:Saman-e-Bakhsish

حق کے پیارے نور کی آنکھوں کے تارے ہو تمہیں

نورِ چشمِ اَنبیا مہرِ عجم ماہِ عرب

 

زُلفِ  والا کی  صفت  وَاللَّیْل ہے قرآن میں

اور  رُخ  کی   وَالضُّحٰی  مہرِ  عجم   ماہِ  عرب

ظلمتیں سب مٹ گئیں ناری سے نوری ہوگیا

جس کے دل میں بس گیا مہرِ عجم ماہِ عرب

ظلمتوں پر ظلمتیں ہیں میرے مولیٰ قبر میں

اب تو اپنا منہ دکھا مہرِ عجم ماہِ عرب

مہر فرما مہر سے عصیاں کی ظلمت محو کر

جلوہ فرما ہو ذرا مہرِ عجم ماہِ عرب

نور سے معمور ہو جائے مرا سینہ اگر

دل پہ رکھ دے اپنا پا مہرِ عجم ماہِ عرب

اِک اشارے سے قمر کے تم نے دو ٹکڑے کئے

مرحبا صد مرحبا مہرِ عجم ماہِ عرب

نور کی سرکار ہے تو بھیک بھی نوری ملے

قلب نوریؔ جگمگا مہرِ عجم ماہِ عرب

 

ہے تم سے عالم پرضیا ماہِ عجم مہرِ عرب

ہے تم سے عالم پرضیا ماہِ عجم مہرِ عرب

دے دو میرے دل کو جلا ماہِ عجم مہرِ عرب

دونوں جہاں میں آپ ہی کے نور کی ہے روشنی

دنیا و عقبیٰ میں شہا ماہِ عجم مہرِ عرب

کب ہوتے یہ شام و سحر کب ہوتے یہ شمس و قمر

جلوہ نہ ہوتا گر ترا ماہِ عجم مہرِ عرب

شام و سحر کے قلب میں شمس و قمر کی آنکھ میں

جلوہ ہے جلوہ آپ کا ماہِ عجم مہرِ عرب

ہے رُوسیہ مجھ کو کیا آقا مرے اَعمال نے

کردو اُجالا منھ مرا ماہِ عجم مہرِ عرب

 



Total Pages: 123

Go To