Book Name:Saman-e-Bakhsish

ظلمتِ قبر کا کیا خوف مجھے اے نوریؔ

جب مرے قلب میں اِیمان کا لمعاں ہوگا

 

ماہِ تاباں تو ہوا مہر عجم ماہِ عرب

ماہِ تاباں تو ہوا مہرِ عجم ماہِ عرب

ہیں ستارے اَنبیا مہرِ عجم ماہِ عرب

ہیں صفاتِ حق کے نوری آئینے سارے نبی

ذاتِ حق کا آئینہ مہرِ عجم ماہِ عرب

کب ستارا کوئی چمکا سامنے خورشید کے

ہو نبی کیسے نیا مہرِ عجم ماہِ عرب

آپ ہی کے نور سے تابندہ ہیں شمس و قمر

دل چمک جائے مرا مہرِ عجم ماہِ عرب

قبر کا ہر ذَرَّہ اِک خورشیدِ تاباں ہو ابھی

رُخ سے پردہ دو ہٹا مہرِ عجم ماہِ عرب

کوچۂ پُرنور کا ہر ذَرَّہ رَشکِ مہر ہے

واہ کیا کہنا ترا مہرِ عجم ماہِ عرب

 

رُوسیہ ہوں منہ اُجالا کر مرا جانِ قمر

صبح کر یا چاندنا مہرِ عجم ماہِ عرب

نَیّرِ چرخِ رِسالت جس گھڑی طالع ہوا

اَوج پر تھا غَلغَلہ مہرِ عجم ماہِ عرب

آپ نے جب مشرقِ اَنوار سے فرمایا طلوع

دامنِ شب پھٹ گیا مہرِ عجم ماہِ عرب

ظلمتِ شب مٹ گئی جب آپ جلوہ گر ہوئے

رات تھی پَر دِن ہوا مہرِ عجم ماہِ عرب

تم نے مغر ب سے نکل کر اِک قیامت کی بپا

کافروں پر سروَرا مہرِ عجم ماہِ عرب

آفتابِ ہاشمی تو غرب سے طالع ہو پھر

کر سویرا نور کا مہرِ عجم ماہِ عرب

 



Total Pages: 123

Go To