Book Name:Saman-e-Bakhsish

جو تبسم سے عیاں اِک دُرِ دَنداں ہوگا

ذَرَّہ ذَرَّہ مرے گھر کا مَہِ تاباں ہوگا

کیوں مجھے خوف ہو محشر کا کہ ہاتھوں میں مرے

دامنِ حامیِ خود ماحیِ عصیاں ہوگا

پلہ عصیاں کا گراں بھی ہو تو کیا خوف مجھے

میرے پلے پہ تو وہ رحمتِ رَحماں ہوگا

مجھ سے عاصی کو جو بے داغ چھڑا لائیں گے

اَہلِ محشر میں جو دیکھے گا وہ حیراں ہوگا

کوئی منہ میرا تکے گا کہ یہ وہ عاصی ہے

جس کو ہم جانتے تھے داخلِ میزاں ہوگا

کوئی اس رحمتِ عالم پہ تصدق ہوگا

کوئی یہ شانِ کرم دیکھ کے قرباں ہوگا

ماجرا دیکھ کے ہوگا یہ کسی کو سکتہ

اِک تعجب سے وہ اَنگشت بدنداں ہوگا

 

ان کی حیرت پہ کہوں گا کہ تعجب کیا ہے

خود خدا ہوگا جدھر سروَرِ ذِیشاں ہوگا

دَم نکل جائے تمہیں دیکھ کے آسانی سے

کچھ بھی دشوار نہ ہوگا جو یہ آساں ہوگا

زخم پر زخم یہی کھائے یہی قتل بھی ہو

خونِ مسلم ابھی کیا اس سے بھی اَرزاں ہوگا

بھیڑیوں کا ہے یہ جنگل نہیں کوئی رَاعی

بھولی بھیڑوں کا شہا کون نگہباں ہوگا

ظلم پر ظلم سہے اور سزائیں بھگتے

اور اُف کی تو تہ خنجرِ بُرَّاں ہوگا

یہی اَندھیر اگر اور بھی کچھ روز رہا

تو مسلماں کا نشاں بھی نہ نمایاں ہوگا

صبحِ روشن کی سیہ بختی سے اب شام ہوئی

کب قمر نور دَہِ شامِ غریباں ہوگا

تو اگر چاہے ملے خاک میں سلطانِ زماں

تیرا بندہ کوئی تو چاہے تو سلطاں ہوگا

 



Total Pages: 123

Go To