Book Name:Saman-e-Bakhsish

وَاللّٰہ  وہ  سن  لیں  گے  اور  دل  کی  دوا  دیں  گے

بے کار نہ جائے گا فریاد و بکا کرنا

اَعدا کو خدا والا جب تم نے بنا ڈالا

دُشوار ہے تم پر کیا مجھ بد کا بھلا کرنا

سوکھی ہے مری کھیتی پَڑ جائے بھرن تیری

اے اَبرِ کرم اِتنا تو بہرِ خدا کرنا

جو سوختہ ہِیزَم کو چاہو تو ہرا کردو

مجھ سوختہ جاں کا بھی دل پیارے ہرا کرنا

طیبہ میں بلا لینا اور اپنا بنا لینا

قیدی غمِ فرقت کے سرکار رِہا کرنا

ہم عرض کیے جائیں سرکار سنے جائیں

کیا دُور کرم سے ہے دِن ایسا شہا کرنا

سنگِ دَرِ سروَر پر رکھا ہوا ہو یہ سر

اے کاش ہو قسمت میں اس طرح قضا کرنا

 

کھل جائیں چمن دِل کے اور حزن مٹیں دِل کے

طیبہ سے صبا آکے اِمداد ذرا کرنا

ہر داغ مٹا دینا اور دِل کو شفا دینا

آئینہ بنا دینا ایسی تو جلا کرنا

سروَر ہے وہی سروَر اے سروَرِ ہر سروَر

ہے آپ کے قدموں پر سر جس کو فدا کرنا

شہرہ لبِ عیسیٰ کا جس بات میں ہے مولا

تم جانِ مسیحا ہو ٹھوکر سے اَدا کرنا

تو جانِ مسیحا سے حالت مری جا کہنا

اتنا تو کرم مجھ پَر اے بادِ صبا کرنا

پردہ میں جو رہتے ہو پردہ ہے چلے آؤ

آنکھوں میں بسا کرنا تم دِل میں رَہا کرنا

اُف کیسی قیامت ہے یہ روزِ قیامت بھی

 



Total Pages: 123

Go To