Book Name:Saman-e-Bakhsish

      (کنزالعمال، ۱۵ / ۱۱۱، الحدیث۴۰۸۱۵، دارالکتب العلمیۃ بیروت)

 

چارہ گر ہے دِل تو گھائل عشق کی تلوار کا

چارہ گر ہے دِل تو گھائل عشق کی تلوار کا

کیا کروں میں لے کے پھاہا مرہمِ زَنگار کا

رُوکشِ خلدِ بریں ہے دیکھ کوچہ یار کا

حیف بلبل اب اگر لے نام تو گلزار کا

حسن کی بے پردگی پردہ ہے آنکھوں کے لیے

خود تجلی آپ ہی پردہ ہے رُوئے یار کا

حسن تو بے پردہ ہے پردہ ہے اپنی آنکھ پر

دِل کی آنکھوں سے نہیں ہے پردہ رُوئے یار کا

اِک جھلک کا دیکھنا آنکھوں سے گو ممکن نہیں

پھر بھی عالم دِل سے طالب ہے ترے دِیدار کا

تیرے باغِ حسن کی رونق کا کیا عالم کہوں

آفتاب اِک زَرد پتا ہے ترے گلزار کا

کب چمکتا یہ ہلالِ آسماں ہر ماہ یوں

جو نہ ہوتا اس پہ پرتو اَبروئے سرکار کا

 

جاگ اُٹھی سوئی قسمت اور چمک اُٹھا نصیب

جب تصوّر میں سمایا رُوئے اَنور یار کا

حسرتِ دِیدار دِل میں اور آنکھیں بہہ چلیں

                                                                        تو ہی والی ہے خدایا دِیدئہ خوں بار کا

بھیک اپنے مرہمِ دِیدار کی کردو عطا

چاہیے کچھ منہ بھی کرنا زخمِِ دامن دار کا

کام نشتر کا کیا ناصِح نصیحت نے تری

چیر ڈالا اور دامن زخمِ دامن دار کا

یوں ہی کچھ اچھا مَداوا اس کا ہوگا بخیہ گر

چاک کر ڈالوں گریباں زخمِ دامن دار کا

اَز سرِ بالینِ من بر خیز اے ناداں طبیب

 



Total Pages: 123

Go To