Book Name:Saman-e-Bakhsish

 

وصف کیا لکھے کوئی اس مہبط اَنوار کا

وصف کیا لکھے کوئی اس مَہْبِطِ اَنوار کا

مہر و مہ میں جلوہ ہے جس چاند سے رُخسار کا

عرشِ اَعظم پر پھریرا ہے شہِ اَبرار کا

بجتا ہے کونین میں ڈَنکا مرے سرکار کا

دوجہاں میں بٹتا ہے باڑہ اسی سرکار کا

دونوں عالم پاتے ہیں صدقہ اسی دَربار کا

جاری ہے آٹھوں پہر لنگر سخی دَربار کا

فیض پر ہر دَم ہے دَریا اَحمدِ مختار کا

روضۂ والائے طیبہ مخزنِ اَنوار ہے

کیا کہوں عالم میں تجھ سے جلوہ گاہِ یار کا

دل ہے کس کا جان کس کی سب کے مالک ہیں وہی

دونوں عالم پر ہے قبضہ اَحمدِ مختار کا

 

 

کیا کرے سونے کا کشتہ کشتہ تیرِ عشق کا

دِید کا پیاسا کرے کیا شربتِ دِینار کا

فق ہو چہرہ مہر و مہ کا ایسے منہ کے سامنے

جس کو قسمت سے ملے بوسہ تری پیزار کا

لات ماری تم نے دُنیا پر اگر تم چاہتے

سلسلہ سونے کا ہوتا سلسلہ کُہسار کا

میں تیری رحمت کے قرباں اے مرے اَمن واَ ماں

کوئی بھی پُرساں نہیں ہے مجھ سے بدکردار کا

ہیں مَعاصی حد سے باہر پھر بھی زاہد غم نہیں

رحمتِ عالم کی اُمت بندہ ہوں غفار کا

تو ہے رحمت بابِ رحمت تیرا دَروازہ ہوا

سایۂ فضلِ خدا سایہ تیری دِیوار کا

کعبہ و اَقصیٰ و عرش و خلد ہیں نوریؔ مگر

 



Total Pages: 123

Go To