Book Name:Saman-e-Bakhsish

لَآاِلٰہَ اِلَّا اللّٰہ اٰمَنَّا بِرَسُوْلِ اللّٰہ

بے ساز و برگی کے سوا                              کوئی پھلا اور پھولا نہ تھا

بطن میں جلوہ فرما تھا                                 جب کہ ہوا وہ نور خدا

لَآاِلٰہَ اِلَّا اللّٰہ اٰمَنَّا بِرَسُوْلِ اللّٰہ

قوم مصائب کی تھی شکار                            اور آفتوں سے تھی دو چار

اور ظلموں کی تھی بھرمار                             ایک کو اِک کرتا ناچار

لَآاِلٰہَ اِلَّا اللّٰہ اٰمَنَّا بِرَسُوْلِ اللّٰہ

جور و جفا تھا ان کا شعار                               نیتیں رکھتے تھے وہ خوار

(نا تمام)

امانت رسول نوری  غُفِرَلَہٗ

 

پڑھوں وہ مطلع نوری ثنائے مہر اَنور کا

پڑھوں وہ مَطلعِ نوری ثنائے مہرِ اَنور کا

ہو جس سے قلب روشن جیسے مَطلع مہرِ محشر کا

سرِعرشِ عُلا پہنچا قدم جب میرے سروَر کا

زبانِ   قدسیاں   پر  شور   تھا    اَللّٰہُ   اَکْبَر  کا

بنا عرشِ بریں مَسنَد کفِ پائے منور کا

خدا ہی جانتا ہے مرتبہ سرکار کے سر کا

دوعالم صدقہ پاتے ہیں مرے سرکار کے دَر کا

اسی سرکار سے ملتا ہے جو کچھ ہے مقدر کا

بڑے دَربار میں پہنچایا مجھ کو میری قسمت نے

میں صدقے جاؤں کیا کہنا مرے اَچھے مقدر کا

ہے خشک و تر پہ قبضہ جس کا وہ شاہِ جہاں یہ ہے

یہی ہے بادشاہ بَر کا یہی سلطاں سمندر کا

مٹے ظلمت جہاں کی نور کا تڑکا ہو عالم میں

نقابِ رُوئے اَنور اے مرے خورشید اب  َسرکا

 

ضیا بخشی تری سرکار کی عالم پہ روشن ہے

 



Total Pages: 123

Go To