Book Name:Saman-e-Bakhsish

کچھ ایسا سنوارا ہے تجھ کو خدا نے

کہ تو ہی خدائی کا دولہا بنا ہے

تمہارے ہی دم کی ہیں ساری بہاریں

تمہارے ہی دم سے یہ نشوونما ہے

 

تمہارا ہی رنگ اور تمہاری ہی بو تو

ہے ان پھولوں میں ورنہ پھر اور کیا ہے

چمن ہونا سیراب و شاداب ہونا

یہ پھل پھول لگنا تمہاری عطا ہے

اسی دَم سے آباد سارے جہاں ہیں

اسی دَم سے سارا وجود و بِنا ہے

ہے زیرِ نگیں تیرے مُلکِ الٰہی

تو ہی شاہ والائے قصرِ دَنیٰ ہے

تو   وہ   تاجوَر   ہے  کہ   تاجِ    رَفَعْنَا

ترے فرقِ اَقدس پہ حق نے دَھرا ہے

مہ و خور چمکتے دمکتے ہی نہ یوں

یہ تیری چمک ہے یہ تیری ضیا ہے

ستاروں کی آنکھوں میں ہے نور کس کا

تمہاری چمک ہے تمہاری ضیا ہے

( یہ نعت پاک ناتمام ہے )

امانت رسول رضوی  غُفِرَلَہ

 

رُباعیات

کفشِ پا اُن کی رکھوں سر پہ تو پاؤں عزت

خاکِ پا اُن کی مَلوں منہ پہ تو پاؤں طَلعَت

طیبہ کی ٹھنڈی ہوا آئے تو پاؤں فرحت

قلبِ بے چین کو چین آئے تو جاں کو راحت

منظورِ نظر ہے بس ثنائے سرکار

 



Total Pages: 123

Go To