Book Name:Zoq-e-Naat

اگر سلطنت کی ہوس ہے فقیرو

کہو      شَیْئَا       لِّلّٰہ       یاغوثِ       اعظم

 

نکالا ہے پہلے تو ڈُوبے ہوؤں کو

اور اب ڈُوبتوں کو بچا غوثِ اعظم

 

جسے خلق کہتی ہے پیارا خدا کا

اسی کا ہے تو لاڈلا غوثِ اعظم

 

کیا غور جب گیارہویں بارہویں میں

معما یہ ہم پر کھلا غوثِ اعظم

 

تمہیں وَصل بے فصل ہے شاہِ دیں سے

دیا حق نے یہ مرتبہ غوثِ اعظم

 

پھنسا ہے تباہی میں بیڑا ہمارا

سہارا لگا دو ذرا غوثِ اعظم

 

مشائخ جہاں آئیں بہر گدائی

وہ ہے تیری دولت سرا غوثِ اعظم

 

مری   مشکلوں   کو   بھی   آسان   کیجے

کہ ہیں آپ مشکل کشا غوثِ اعظم

 

وہاں سر جھکاتے ہیں سب اُونچے اُونچے

جہاں ہے ترا نقش پا غوثِ اعظم

 

قسم ہے کہ مشکل کو مشکل نہ پایا

کہا ہم نے جس وقت یاغوثِ اعظم

 

مجھے پھیر میں نفسِ کافر نے ڈالا

بتا جائیے راستا غوثِ اعظم

 

کھلا دے جو مرجھائی کلیاں دِلوں کی

چلا کوئی ایسی ہوا غوثِ اعظم

 

مجھے اپنی اُلفت میں ایسا گما دے

نہ پاؤں پھر اپنا پتا غوثِ اعظم

 

 

 



Total Pages: 158

Go To