Book Name:Zoq-e-Naat

جلاد نفس بد سے دیجے مجھے رِہائی

اب ہے گلے پہ خنجر تم پر سلام ہر دم

 

دَریوزہ گر ہوں میں بھی اَدنیٰ سا اس گلی کا

لطف و کرم ہو مجھ پر تم پر سلام ہر دم

 

کوئی نہیں ہے میرا میں کس سے داد چاہوں

سلطانِ بندہ پروَر تم پر سلام ہر دم

 

غم کی گھٹائیں گھِر کر آئی ہیں ہر طرف سے

اے مہر ذَرَّہ پروَر تم پر سلام ہر دم

 

بلوا کے اپنے دَر پر اب مجھ کو دیجے عزت

پھرتا ہوں خوار دَر دَر تم پر سلام ہر دم

 

محتاج سے تمہارے کرتے ہیں سب کنارہ

بس اِک تمہیں ہو یاوَر تم پر سلام ہر دم

 

بہر خدا بچاؤ اِن خارہائے غم سے

اِک دل ہے لاکھ نشتر تم پر سلام ہر دم

 

کوئی نہیں ہمارا ہم کس کے دَر پہ جائیں

اے بیکسوں کے یاوَر تم پر سلام ہر دم

 

کیا خوف مجھ کو پیارے نارِ جحیم سے ہو

تم ہو شفیع محشر تم پر سلام ہر دم

 

اپنے گدائے در کی لیجے خبر خدارا

کیجیکرم  حسنؔ  پر  تم   پر  سلام  ہر  دم

اے مدینے کے تاجدار سلام

اے مَدینے کے تاجدار سلام

اے غریبوں کے غمگسار سلام

 

تیری اِک اِک اَدا پر اے پیارے

سو دُرودیں فدا ہزار سلام

 

رَبِّ  سَلِّم  کے  کہنے   والے   پر

جان کے ساتھ ہوں نثار سلام

 

 

 



Total Pages: 158

Go To