Book Name:Zoq-e-Naat

میں تصدق جاؤں اے شمس الضحٰے بدرالدجیٰ

اس دلِ تاریک پر بھی کوئی لمعانِ جمال

 

سب سے پہلے حضرتِ یوسف کا نامِ پاک لوں

میں گناؤں گر تیرے اُمیدوارانِ جمال

 

بے بصر پر بھی یہ اُن کے حسن نے ڈالا اثر

دل میں ہے پھوٹی ہوئی آنکھوں پہ ارمانِ جمال

 

عاشقوں نے رَزمگاہوں میں گلے کٹوا دئیے

واہ کس کس لطف سے کی عید قربانِ جمال

 

یاخدا دیکھوں بہارِ خندۂ دنداں نما

برسے کشت آرزو پر اَبر نیسانِ جمال

 

ظلمت مرقد سے اَندیشہ حسنؔ کو کچھ نہیں

ہے وہ مداحِ حسیناں منقبت خوانِ جمال

اے دین حق کے رہبر تم پر سلام ہر دم

اے دین حق کے رہبر تم پر سلام ہر دم

میرے شفیعِ محشر تم پر سلام ہر دم

 

اس بے کس و حزیں پر جو کچھ گزر رہی ہے

ظاہر ہے سب وہ تم پر، تم پر سلام ہر دم

 

دنیا و آخرت میں جب میں رہوں سلامت

پیارے پڑھوں نہ کیونکر تم پر سلام ہر دم

 

دل تفتگانِ فرقت پیاسے ہیں مدتوں سے

ہم کو بھی جامِ کوثر تم پر سلام ہر دم

 

بندہ تمہارے دَر کا آفت میں مبتلا ہے

رحم اے حبیب داوَر تم پر سلام ہر دم

 

بے وارثوں کے وارث بے والیوں کے والی

تسکین جانِ مضطر تم پر سلام ہر دم

 

لِلّٰہ     ابہماری     فریاد    کو     پہنچئے

بے حد ہے حال اَبتر تم پر سلام ہر دم

 

 

 



Total Pages: 158

Go To