Book Name:Zoq-e-Naat

 

 

دعا خدا سے غمِ عشقِ مصطفیٰ کی ہے

حسنؔ یہ غم ہے نشاط و سرور کی رونق

جو ہو سر کو رسائی اُن کے دَر تک

جو ہو سر کو رَسائی اُن کے دَر تک

تو پہنچے تاجِ عزت اپنے سر تک

 

وہ جب تشریف لائے گھر سے دَر تک

بھکاری کا بھراہے دَر سے گھر تک

 

دُہائی ناخدائے بے کساں کی

کہ سیلابِ اَلم پہنچا کمر تک

 

الٰہی دل کو دے وہ سوزِ اُلفت

پھنکے سینہ جلن پہنچے جگر تک

 

نہ ہو جب تک تمہارا نام شامل

دعائیں جا نہیں سکتیں اَثر تک

 

گزر کی راہ نکلی رَہ گزر میں

ابھی پہنچے نہ تھے ہم ان کے در تک

 

خدا یوں اُن کی اُلفت میں گمادے

نہ پاؤں پھر کبھی اپنی خبر تک

 

بجائے چشم خود اُٹھ تا نہ ہو آڑ

جمالِ یار سے تیری نظر تک

 

تری نعمت کے بھوکے اَہل دولت

تری رحمت کا پیاسا اَبر تک

 

نہ ہوگا دو قدم کا فاصلہ بھی

الٰہ آباد سے اَحمد نگر تک

 

تمہارے حُسن کے باڑے کے صدقے

نمک خوارِ َملاحت ہے قمر تک

 

شبِ معراج تھے جلوے پہ جلوے

شبستانِ دَنیٰ سے ان کے گھر تک

 



Total Pages: 158

Go To