Book Name:Zoq-e-Naat

آنکھیں جو بند ہوں تو مقدر کھلے حسنؔ

جلوے خود آئیں طالبِ دِیدار کی طرف

مُصافحہ کی برکت

       حضرت وَائل بن حجر رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں کہ جب میں رسول اللّٰہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے مصافحہ کرتا تھا یا میرا بدن آپ کے بدن سے مس کر تا تو میرا ہاتھ کستوری سے زیادہ خوشبو دار ہوتا۔)المواہب اللدنیۃ مع شرح الزرقانی، ۵ / ۴۵۲، دارالکتب العلمیۃ بیروت(

ترا ظہور ہوا چشم نور کی رونق

ترا ظہور ہوا چشم نور کی رونق

ترا ہی نور ہے بزمِ ظہور کی رونق

 

رہے نہ عفو میں پھر ایک ذَرَّہ شک باقی

جو اُن کی خاکِ قدم ہو قبور کی رونق

 

نہ فرش کا یہ تجمل نہ عرش کا یہ جمال

فقط ہے نور و ظہورِ حضور کی رونق

 

تمہارے نور سے روشن ہوئے زمین و فلک

یہی جمال ہے نزدیک و دُور کی رونق

 

زبانِ حال سے کہتے ہیں نقش پا اُن کے

ہمیں ہیں چہرۂ غلمان و حور کی رونق

 

تِرے نثار ترا ایک جلوۂ رنگیں

بہارِ جنت و حور و قصور کی رونق

 

ضیا زمین و فلک کی ہے جس تجلی سے

الٰہی ہو وہ دلِ ناصبور کی رونق

 

یہی فروغ تو زیب صفا و زینت ہے

یہی ہے حسن و تجلی و نور کی رونق

 

حضور تیرہ و تاریک ہے یہ پتھر دل

تجلّیوں سے ہوئی کوہِ طور کی رونق

 

سجی ہے جن سے شبستانِ عالم اِمکاں

وہی ہیں مجلس رَوزِ نشور کی رونق

 

کریں دلوں کو منور سراج[1]؎ کے جلوے

فروغِ بزمِ عوارِف ہو نور [2]؎ کی رونق

 



[1]    سراج العوارف مصنفہ حضرت پیرو مرشد برحق  رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ۔۱۲

[2]     تخلص حضرت سیدنا شاہ ابوالحسین احمد نوری مارہروی   رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہ۔۱۲



Total Pages: 158

Go To