Book Name:Zoq-e-Naat

مونھ اس کا دیکھتی ہیں بہاریں بہشت کی

جس کی نگاہ ہے ترے رُخسار کی طرف

 

جاں بخشیاں مسیح کو حیرت میں ڈالتیں

چپ بیٹھے دیکھتے تری رفتار کی طرف

 

محشر میں آفتاب اُدھر گرم اَور اِدھر

آنکھیں لگی ہیں دامنِ دِلدار کی طرف

 

پھیلا ہوا ہے ہاتھ ترے دَر کے سامنے

گردن جھکی ہوئی تری دیوار کی طرف

 

گوبے شمار جرم ہوں گو بے عدد گناہ

کچھ غم نہیں جو تم ہو گنہگار کی طرف

 

یوں مجھ کو موت آئے تو کیا پوچھنا مرا

میں خاک پر نگاہ درِ یار کی طرف

 

کعبے کے صدقے دل کی تمنا مگر یہ ہے

مرنے کے وقت مونھ ہو دَرِ یار کی طرف

 

دے جاتے ہیں مراد جہاں مانگئے وہاں

مونھ ہونا چاہیے دَرِ سرکار کی طرف

 

روکے گی حشر میں جو مجھے پاشکستگی

دَوڑیں گے ہاتھ دامن دِلدار کی طرف

 

آہیں دلِ اَسیر سے لب تک نہ آئی تھیں

اور آپ دوڑے آئے گرفتار کی طرف

 

دیکھی جو بے کسی تو اُنہیں رحم آگیا

گھبرا کے ہوگئے وہ گنہگار کی طرف

 

بٹتی ہے بھیک دوڑتے پھرتے ہیں بے نوا

دَر کی طرف کبھی کبھی دیوار کی طرف

 

عالم کے دِل تو بھرگئے دولت سے کیا عجب

گھر دَوڑنے لگیں درِ سرکار کی طرف

 

 

 



Total Pages: 158

Go To