Book Name:Zoq-e-Naat

کیا کہے وصف کوئی دشتِ مَدینہ تیرا

پھول کی جان نزاکت میں ہے کانٹا تیرا

 

کس کے دامن میں چھپے کس کے قدم پر لوٹے

تیرا سگ جائے کہاں چھوڑ کے ٹکڑا تیرا

 

خسروِ کون و مکاں اور تواضع ایسی

ہاتھ تکیہ ہے ترا خاک بچھونا تیرا

 

خوبرویانِ جہاں تجھ پہ فدا ہوتے ہیں

وہ ہے اے ماہِ عرب حسن دِل آرا تیرا

 

دشت پرہول میں گھیرا ہے درندوں نے مجھے

اے مِرے خضر اِدھر بھی کوئی پھیرا تیرا

 

بادشاہانِ جہاں بہرِ گدائی آئیں

دینے پر آئے اگر مانگنے والا تیرا

 

دشمن و دوست کے منہ پر ہے کشادہ یکساں

روئے آئینہ ہے مولیٰ درِ والا تیرا

 

پاؤں مجروح ہیں منزل ہے کڑی بوجھ بہت

آہ گر ایسے میں پایا نہ سہارا تیرا

 

نیک اچھے ہیں کہ اَعمال ہیں ان کے اچھے

ہم بدوں کے لئے کافی ہے بھروسا تیرا

 

آفتوں میں ہے گرفتار غلامِ عجمی

اے عرب والے اِدھر بھی کوئی پھیرا تیرا

 

اُونچے اُونچوں کو ترے سامنے ساجد پایا

کس طرح سمجھے کوئی رتبۂ اَعلیٰ تیرا

 

خارِ صحرائے نبی پاؤں سے کیا کام تجھے

آ مِری جان مِرے دل میں ہے رستہ تیرا

 

کیوں نہ ہو ناز مجھے اپنے مقدر پہ کہ ہوں

سگ تِرا بندہ تِرا مانگنے والا تیرا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To