Book Name:Zoq-e-Naat

خاکِ طیبہ کی اگر دل میں ہو وَقعت محفوظ

عیب کوری سے رہے چشمِ بصیرت محفوظ

 

دل میں روشن ہو اگر شمع وِلائے مولیٰ

دُزدِ شیطاں سے رہے دِین کی دولت محفوظ

 

یا خدا محو نظارہ ہوں یہاں تک آنکھیں

شکل قرآں ہو مِرے دل میں وہ صورت محفوظ

 

سلسلہ زلف مبارک سے ہے جس کے دل کو

ہر   بلا   سے  رکھے   اللّٰہ   کی   رحمت  محفوظ

 

تھی جو اُس ذات سے تکمیل فرامیں منظور

رکھی خاتم کے لئے مہرِ نبوت محفوظ

 

اے نگہبان مِرے تجھ پہ صلاۃ اور سلام

دو جہاں میں تِرے بندے ہیں سلامت محفوظ

 

واسطہ حفظِ الٰہی کا بچا رہزن سے

رہے ایمانِ غریباں دمِ رحلت محفوظ

 

شاہیٔ کون و مکاں آپ کو دی خالق نے

کنز قدرت میں اَزَل سے تھی یہ دولت محفوظ

 

تیرے قانون میں گنجائش تبدیل نہیں

نسنح و ترمیم سے ہے تری شریعت محفوظ

 

جسے آزاد کرے قامتِ شہ کا صدقہ

رہے فتنوں سے وہ تا روزِ قیامت محفوظ

 

اس کو اَعدا کی عداوَت سے ضرر کیا پہنچے

جس کے دِل میں ہو حسنؔ اُن کی محبت محفوظ

 

اَن چھنے آٹے کی روٹی

       ابن سعد بروایت ابو اسحاق نقل کرتے ہیں کہ امیر المؤمنین حضرت سیدنا عمر فاروق رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ نے فرمایا کہ میں نے رسول اللّٰہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّم کو بن چھانے آٹے کی روٹی کھاتے دیکھا ہے اس لئے میرے واسطے آٹا نہ چھانا جائے ۔    )طبقات الکبری لابن سعد ، ۱ / ۳۰۱، دارالکتب العلمیۃ بیروت(

مدینہ میں ہے وہ سامان بارگاہ رفیع

مَدینہ میں ہے وہ سامانِ بارگاہِ رفیع

عروج و اَوج ہیں قربانِ بارگاہِ رفیع

 

 



Total Pages: 158

Go To