Book Name:Zoq-e-Naat

میکدہ میں ہے ترانہ تو اَذاں مسجد میں

وَصف ہوتا ہے نئے رنگ سے ہر جا تیرا

 

چاک ہو جائیں گے دِل جیب و گریباں کس کے

دے نہ چھپنے کی جگہ راز کو پردہ تیرا

 

بے نوا مفلس و محتاج و گدا کون کہ میں

صاحبِ جود و کرم وصف ہے کس کا تیرا

 

آفریں اہل محبت کے دلوں کو اے دوست

ایک کو زے میں لئے بیٹھے ہیں دریا تیرا

 

اتنی نسبت بھی مجھے دونوں جہاں میں بس ہے

تو مرا مالک و مولیٰ ہے میں بندہ تیرا

 

انگلیاں کانوں میں دے دے کے سنا کرتے ہیں

خلوتِ دِل میں عجب شور ہے برپا تیرا

 

اب جماتا ہے حسنؔ اُس کی گلی میں بستر

خوبرویوں کا جو محبوب ہے پیارا تیرا

جن و انسان و ملک کو ہے بھروسا تیرا

جن و اِنسان و مَلک کو ہے بھروسا تیرا

سروَرا مرجعِ کل ہے دَرِ والا تیرا

 

واہ اے عطرِ خدا ساز مہکنا تیرا

خوبرو ملتے ہیں کپڑوں میں پسینہ تیرا

 

دہر میں آٹھ پہر بٹتا ہے باڑا تیرا

وقف ہے مانگنے والوں پہ خزانہ تیرا

 

لامکاں میں نظر آتا ہے اُجالا تیرا

دُور پہنچایا ترے حسن نے شہرہ تیرا

 

جلوۂ یار اِدھر بھی کوئی پھیرا تیرا

حسرتیں آٹھ پہر تکتی ہیں رَستہ تیرا

 

یہ نہیں ہے کہ فقط ہے یہ مَدینہ تیرا

تو ہے مختار دو عالم پہ ہے قبضہ تیرا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To