Book Name:Zoq-e-Naat

ماہ کی جان مہر کا ایماں

جلوۂ حسن بے زوالِ حضور

 

حسن یوسف کرے زلیخائی

خواب میں دیکھ کر جمالِ حضور

 

وقف اِنجاحِ مقصد خدام

ہر شب و روز و ماہ و سالِ حضور

 

سکہ رائج ہے حکم جاری ہے

دونوں عالم میں ہیں ملک و مالِ حضور

 

تابِ دیدار ہو کسے جو نہ ہو

پردۂ غیب میں جمالِ حضور

 

جو نہ آئی نظر نہ آئے نظر

ہر نظر میں ہے وہ مثالِ حضور

 

انہیں نقصان دے نہیں سکتا

دشمن اپنا ہے بدسگالِ حضور

 

حال سے کشف رازِ قال نہ ہو

قال سے کیا عیاں ہو حالِ حضور

 

دُرَّۃُ التَّاج فرقِ شاہی ہے

ذَرَّۂ شوکت نعالِ حضور

 

منزلِ رُشد کے نجوم اَصحاب

کشتی خیر و اَمن آلِ حضور

 

ہے مس قلب کے لئے اِکسیر

اے حسنؔ خاک پائمالِ حضور

سیر گلشن کون دیکھے دشت طیبہ چھوڑ کر

سیر گلشن کون دیکھے دشتِ طیبہ چھوڑ کر

سوئے جنت کون جائے دَر تمہارا چھوڑ کر

 

سر گزشت غم کہوں کس سے تِرے ہوتے ہوئے

کس کے در پر جاؤں تیرا آستانہ چھوڑ کر

 

 

 



Total Pages: 158

Go To