Book Name:Zoq-e-Naat

جان نکلے تو اس طرح نکلے

تجھ پر اے غمزدوں کے یار دُرود

 

دل میں جلوے بسے ہوئے تیرے

لب سے جاری ہو بار بار دُرود

 

اے حسنؔ خارِ غم کو دِل سے نکال

غمزدوں کی ہے غمگسار دُرود

رنگ چمن پسند نہ پھولوں کی بو پسند

رنگ چمن پسند نہ پھولوں کی بو پسند

صحرائے طیبہ ہے دلِ بلبل کو تو پسند

 

اپنا عزیز وہ ہے جسے تو عزیز ہے

ہم کو ہے وہ پسند جسے آئے تو پسند

 

مایوس ہو کے سب سے میں آیا ہوں تیرے پاس

اے جان کر لے ٹوٹے ہوئے دل کو تو پسند

 

ہیں خانہ زاد بندۂ احساں تو کیا عجب

تیری وہ خو ہے کرتے ہیں جس کو عدو پسند

 

کیونکر نہ چاہیں تیری گلی میں ہوں مٹ کے خاک

دنیا میں آج کس کو نہیں آبرو پسند

 

ہے خاکسار پر کرمِ خاص کی نظر

عاجز نواز ہے تیری اے خوبرو پسند

 

قل کہہ کر اپنی بات بھی لب سے تِرے سنی

اللّٰہ  کو    ہے    اتنی    تری   گفتگو     پسند

 

حور و فرشتہ جن و بشر سب نثار ہیں

ہے دو جہاں میں قبضہ کئے چار سو پسند

 

ان کے گناہگار کی اُمید عفو کو

پہلے  کرے  گی   آیت   لَا       تَقْنَطُوْا     پسند

 

طیبہ میں سر جھکاتے ہیں خاکِ نیاز پر

کونین کے بڑے سے بڑے آبرو پسند

 

ہے خواہشِ وصالِ درِ یار اے حسنؔ

 



Total Pages: 158

Go To