Book Name:Zoq-e-Naat

تمام ہو گئی میلادِ انبیا کی خوشی

ہمیشہ اب تری باری ہے بارہویں تاریخ

 

دلوں کے میل دُھلے گل کھلے سرور ملے

عجیب چشمۂ جاری ہے بارہویں تاریخ

 

چڑھی ہے اَوج پہ تقدیر خاکساروں کی

خدا نے جب سے اُتاری ہے بارہویں تاریخ

 

خدا کے فضل سے ایمان میں ہیں ہم پورے

کہ اپنی روح میں ساری ہے بارہویں تاریخ

 

ولادتِ شہ دِیں ہر خوشی کی باعث ہے

ہزار عید سے بھاری ہے بارہویں تاریخ

 

ہمیشہ تو نے غلاموں کے دل کئے ٹھنڈے

جلے جو تجھ سے وہ ناری ہے بارہویں تاریخ

 

خوشی ہے اہل سنن میں مگر عدو کے یہاں

فغان و شیوَن و زاری ہے بارہویں تاریخ

 

جدھر  گیا    سنی    آواز     یَا رَسُوْلَ   اللّٰہ

ہر اِک جگہ اسے خواری ہے بارہویں تاریخ

 

عدو وِلادتِ شیطاں کے دن منائے خوشی

کہ عید عید ہماری ہے بارہویں تاریخ

 

حسنؔ ولادتِ سرکار سے ہوا روشن

مِرے خدا کو بھی پیاری ہے بارہویں تاریخ

ذات والا پہ بار بار درود

ذاتِ والا پہ بار بار دُرود

بار بار اور بے شمار دُرود

 

رُوئے اَنور پہ نور بار سلام

زُلفِ اَطہر پہ مشکبار دُرود

 

اس مہک پر شمیم بیز سلام

اس چمک پہ فروغ بار دُرود

 

 

 



Total Pages: 158

Go To