Book Name:Zoq-e-Naat

نمک کا خاصہ ہے اپنے کیف پر لانا

ہر ایک شے نہ ہو کیوں بہرہ یابِ حسن ملیح

 

عسل ہو آب بنیں کوزہائے قند حباب

جو بحرِ شور میں ہو عکسِ آبِ حسن ملیح

 

دلِ صباحتِ یوسف میں سوزِ عشق حضور

نبات و قند ہوئے ہیں کبابِ حسن ملیح

 

صبیح ہوں کہ صباحت جمیل ہوں کہ جمال

غرض سبھی ہیں نمک خوارِ بابِ حسن ملیح

 

کھلے جب آنکھ نظر آئے وہ ملاحتِ پاک

بیاضِ صبح ہو یارب کتابِ حسن ملیح

 

حیاتِ بے مزہ و بخت تیرہ میدارم

بتاب اے مہِ گردوں جنابِ حسن ملیح

 

حسنؔ کی پیاس بجھا کر نصیب چمکا دے

تِرے نثار میں اے آب و تابِ حسن ملیح

سحاب رحمت باری ہے بارھویں تاریخ

سحابِ رحمت باری ہے بارہویں تاریخ

کرم کا چشمۂ جاری ہے بارہویں تاریخ

 

ہمیں تو جان سے پیاری ہے بارہویں تاریخ

عدو کے دل کو کٹاری ہے بارہویں تاریخ

 

اسی نے موسم گل کو کیا ہے موسم گل

بہار فصل بہاری ہے بارہویں تاریخ

 

بنی ہے سرمۂ چشم بصیرت و ایماں

اُٹھی جو گردِ سواری ہے بارہویں تاریخ

 

ہزار عید ہوں ایک ایک لحظہ پر قرباں

خوشی دلوں پہ وہ طاری ہے بارہویں تاریخ

 

فلک پہ عرشِ بریں کا گمان ہوتا ہے

زمین خلد کی کیاری ہے بارہویں تاریخ

 

 

 



Total Pages: 158

Go To