Book Name:Zoq-e-Naat

حُسنِ شبابِ ذرۂ طیبہ کچھ اَور ہے

کیا کور باطن آئنہ کیا شیر خوار صبح

 

بس چل سکے تو شام سے پہلے سفر کرے

طیبہ کی حاضری کے لیے بے قرار صبح

 

مایوس کیوں ہو خاک نشیں حُسنِ یار سے

آخر ضیائے ذَرَّہ کی ہے ذمہ دار صبح

 

کیا دشتِ پاکِ طیبہ سے آتی ہے اے حسنؔ

لائی جو اپنی جیب میں نقد بہار صبح

جو نور بار ہوا آفتاب حسن ملیح

جو نور بار ہوا آفتابِ ُحسنِ َملیح

ہوئے زمین و زماں کامیابِ ُحسنِ َملیح

 

زوال مہر کو ہو ماہ کا جمال گھٹے

مگر ہے اَوجِ اَبد پر شبابِ ُحسنِ َملیح

 

زمیں کے پھول گریباں دَریدۂ غمِ عشق

فلک پہ بدر دِل اَفگارِ تابِ ُحسنِ َملیح

 

دلوں کی جان ہے لطفِ صباحتِ یوسف

مگر ہوا ہے نہ ہو گا جوابِ ُحسنِ َملیح

 

الٰہی موت سے یوں آئے مجھ کو میٹھی نیند

مرے خیال کی راحت ہو خوابِ حسن ملیح

 

جمال والوں میں ہے شورِ عشق اور ابھی

ہزار پردوں میں ہے آب و تابِ حسن ملیح

 

زمینِ شور بنے تختۂ گل و سنبل

عرق فشاں ہو اگر آب و تابِ حسن ملیح

 

نثار دولت بیدار و طالع اَزواج

نہ دیکھی چشم زلیخا نے خوابِ حسن ملیح

 

تجلیوں نے نمک بھر دیا ہے آنکھوں میں

ملاحت آپ ہوئی ہے حجابِ حسن ملیح

 

 

 



Total Pages: 158

Go To