Book Name:Zoq-e-Naat

کربلا میں خوب ہی چمکی دُکانِ اَہل بیت

 

زخم کھانے کو تو آبِ تیغ پینے کو دیا

خوب دعوت کی بلا کر دشمنانِ اَہل بیت

 

اپنا سودا بیچ کر بازار سونا کر گئے

کونسی بستی بسائی تاجرانِ اَہل بیت

 

اَہل  بیت  پاک  سے گستاخیاں  بے  باکیاں

لَعْنَۃُ   اللّٰہِ   عَلَیْکُم    دشمنانِ   اَہل   بیت

 

بے ادب گستاخ فرقہ کو سنا دے اے حسنؔ

یوں کہا کرتے ہیں سنی داستانِ اَہل بیت

جاں بلب ہوں آمری جاں اَلْغِیَاث

جاں   بلب   ہوں   آ   مری   جاں   اَلْغِیَاث

ہوتے ہیں کچھ اور ساماں اَلْغِیَاث

 

دَرد مندوں کو دَوا ملتی نہیں

اے دَوائے دَردمنداں اَلْغِیَاث

 

جاں سے جاتے ہیں بے چارے غریب

چارہ فرمائے غریباں اَلْغِیَاث

 

حد سے گزریں دَرد کی بے دَردیاں

دَرد سے بے حد ہوں نالاں اَلْغِیَاث

 

بے قراری چین لیتی ہی نہیں

اے قرارِ بے قراراں اَلْغِیَاث

 

حسرتیں دِل میں بہت بے چین ہیں

گھر ہوا جاتا ہے زِنداں اَلْغِیَاث

 

خاک ہے پامال میری کوبکو

اے ہوائے کوئے جاناں اَلْغِیَاث

 

اَلْمَدَد اے زُلفِ سروَر اَلْمَدَد

ہوں بلاؤں میں پریشاں اَلْغِیَاث

 

دل کی اُلجھن دُور کر گیسوئے پاک

اے کرم کے سنبلستاں اَلْغِیَاث

 



Total Pages: 158

Go To