Book Name:Zoq-e-Naat

جس سے گزرے اے حسنؔ وہ مہر حسن

اُس گلی کا ہو اندھیرا آفتاب

پُر نور ہے زمانہ صبح شب وِلادت

پرنور ہے زمانہ صبحِ شبِ وِلادت

پردہ اُٹھا ہے کس کا صبحِ شبِ وِلادت

 

جلوہ ہے حق کا جلوہ صبحِ شبِ وِلادت

سایہ خدا کا سایہ صبحِ شبِ وِلادت

 

فصل بہار آئی شکل نگار آئی

گلزار ہے زمانہ صبحِ شبِ وِلادت

 

پھولوں سے باغ مہکے شاخوں پہ مرغ چہکے

عہدِ بہار آیا صبحِ شبِ وِلادت

 

پژمردہ حسرتوں کے سب کھیت لہلہائے

جاری ہوا وہ دریا صبحِ شبِ وِلادت

 

گل ہے چراغِ صرصر گل سے چمن معطر

آیا کچھ ایسا جھونکا صبحِ شبِ وِلادت

 

قطرہ میں لاکھ دریا گل میں ہزار گلشن

نشوونما ہے کیا کیا صبحِ شبِ وِلادت

 

جنت کے ہر مکاں کی آئینہ بندیاں ہیں

آراستہ ہے دنیا صبحِ شبِ وِلادت

 

دل جگمگا رہے ہیں قسمت چمک اٹھی ہے

پھیلا نیا اُجالا صبحِ شبِ وِلادت

 

ِچکٹے ہوئے دِلوں کے مدت کے میل چھوٹے

اَبر کرم وہ برسا صبحِ شبِ وِلادت

 

بلبل کا آشیانہ چھایا گیا گلوں سے

قسمت نے رنگ بدلا صبحِ شبِ وِلادت

 

اَرض و سما سے منگتا دوڑے ہیں بھیک لینے

بانٹے گا کون باڑا صبحِ شبِ وِلادت

 

 

 



Total Pages: 158

Go To