Book Name:Zoq-e-Naat

بخت چمکا دے اگر شانِ جمال

ہو مری آنکھوں کا تارا آفتاب

 

نور کے سانچے میں ڈھالا ہے تجھے

کیوں تِرے جلوؤں کا ڈھلتا آفتاب

 

ناخدائی سے نکالا آپ نے

چشمۂ مغرب سے ڈوبا آفتاب

 

ذَرَّہ کی تابش ہے ان کی راہ میں

یا ہوا ہے گر کے ٹھنڈا آفتاب

 

گرمیوں پر ہے وہ حسن بے زَوال

ڈھونڈتا پھرتا ہے سایہ آفتاب

 

ان کے دَر کے ذَرَّہ سے کہتا ہے مہر

ہے تمہارے دَر کا ذَرَّہ آفتاب

 

شامِ طیبہ کی تجلی دیکھ کر

ہو تری تابش کا تڑکا آفتاب

 

رُوئے مولیٰ سے اگر اُٹھتا نقاب

چرخ کھا کر غش میں گرتا آفتاب

 

کہہ رہی ہے صبحِ مولد کی ضیا

آج اندھیرے سے ہے نکلا آفتاب

 

وہ اگر دیں نکہت و طلعت کی بھیک

ذَرَّہ ذَرَّہ ہو مہکتا آفتاب

 

تلوے اور تلوے کے جلوے

پر نثار پیارا پیارا نور پیارا آفتاب

 

اے خدا ہم ذَرّوں کے بھی دن پھریں

جلوہ فرما ہو ہمارا آفتاب

 

ان کے ذَرَّہ کے نہ سر چڑھ حشر میں

دیکھ اب بھی ہے سویرا آفتاب

 

 

 



Total Pages: 158

Go To