Book Name:Zoq-e-Naat

علم و عمر و عمل فراخ معاش                             مجتبیٰ کو بھی کر عطا یارب

کر دے فضل و نعم سے مالا مال                            غم اَلم سے انہیں بچا یارب

ان کے دشمن ذلیل و خوار رہیں                         رَد رہے ان کی ہر بلا یارب

بال بیکا کبھی نہ ہو ان کا                                     بول بالا ہو دائما یارب

میری ماںمیری بہنیں بھانجے سب                        پائیں آرامِ دَوسرا یارب

اَور بھی جتنے میرے پیارے ہیں                         حاجتیں سب کی ہوں رَوا یارب

میرے اَحباب پر بھی فضل رہے                             تیرا تیرے حبیب کا یارب

اَہل سنت کی ہر جماعت پر                                ہر جگہ ہو تری عطا یارب

دشمنوں کے لئے ہدایت کی                              تجھ سے کرتا ہوں اِلتجا یارب

تو حسنؔ کو اُٹھا حسن کر کے                                 ہو مع الخیر خاتمہ یارب

سر سے پا تک ہر ادا ہے لاجواب

سر سے پا تک ہر اَدا ہے لاجواب

خوبرویوں میں نہیں تیرا جواب

 

حسن ہے بے مثل صورت لا جواب

میں فدا تم آپ ہو اپنا جواب

 

پوچھے جاتے ہیں عمل میں کیا کہوں

تم سکھا جاؤ مِرے مولا جواب

 

میری حامی ہے تیری شانِ کریم

پرسشِ روزِ قیامت کا جواب

 

ہیں دعائیں سنگ دشمن کا عوض

اس قدر نرم ایسے پتھر کا جواب

 

پلتے ہیں ہم سے نکمے بے شمار

ہیں کہیں اس آستانہ کا جواب

 

روزِ محشر ایک تیرا آسرا

سب سوالوں کا جوابِ لا جواب

 

میں ید بیضا کے صدقے اے کلیم

پر کہاں اُن کی کفِ پا کا جواب

 

کیا عمل تو نے کئے اس کا سوال

تیری رحمت چاہیے میرا جواب

 

 

 



Total Pages: 158

Go To