Book Name:Zoq-e-Naat

میری آنکھیں مرے لئے ترسیں                      مجھ سے ایسا مجھے چھپا یارب

ٹیس کم ہو نہ دَردِ اُلفت کی                              دل تڑپتا رہے مرا یارب

نہ بھریں زخم دل ہرے ہو کر                           رہے گلشن ہرا بھرا یارب

تیری جانب یہ مشتِ خاک اُڑے              بھیج ایسی کوئی ہوا یارب

داغِ اُلفت کی تازگی نہ گھٹے                              باغ دِل کا رہے ہرا یارب

سَبَقَتْ رَحْمَتِیْ عَلٰی غَضَبِیْ                                          جب سے تو نے سنا دیا یارب

آسرا ہم گناہگاروں کا                                    اَور مضبوط ہو گیا یارب

ہے  اَنَا عِنْدَ ظَنِّ عَبْدِیْ بِیْ                                                                                                                        میرے ہر دَرد کی دَوا یارب

تونے میرے ذلیل ہاتھوں میں                         دامنِ مصطفٰے دیا یارب

تو نے دی مجھ کو نعمتِ اسلام                             پھر جماعت میں لے لیا یارب

کر دیا تو نے قادِری مجھ کو                                تیری قدرت کے میں فدا یارب

دولتیں ایسی نعمتیں اتنی                                 بے غرض تو نے کیں عطا یارب

دے کے لیتے نہیں کریم کبھی                          جو دِیا جس کو دے دِیا یارب

تو کریم اور کریم بھی ایسا                                کہ نہیں جس کا دُوسرا یارب

ظن نہیں بلکہ ہے یقین مجھے                             وہ بھی تیرا دِیا ہوا یارب

ہو گا دنیا میں قبر و محشر میں                               مجھ سے اچھا معاملہ یارب

اس نکمے سے کام لے ایسے                               یہ نکما ہو کام کا یارب

مجھے ایسے عمل کی دے توفیق                            کہ ہو راضی تری رضا یارب

جس نے اپنے لئے برائی کی                             ہے یہ نادان وہ برا یارب

ہر بھلے کی بھلائی کا صدقہ                                اس برے کو بھی کر بھلا یارب

میں نے بنتی ہوئی بگاڑی بات                             بات بگڑی ہوئی بنا یارب

میں نے سُبْحٰنَ رَبِّیَ الْاَعْلٰی                                                                                                                        خاک پر رکھ کے سر کہا یارب

صدقہ اس دی ہوئی بلندی کا                             پستیوں سے مجھے بچا یارب

بونے والے جو بوئیں وہ کاٹیں                           یہ ہوا تو میں مر مٹا یارب

آہ جو بو چکا ہوں وقت دِرَوْ                              ہو گا حسرت کا سامنا یارب

صدقہ ماہِ رَبیع الاوّل کا                                   گیہوں اس کھیت سے اُگا یارب

پاک ہے دُرد و دَرد سے جو مئے                          جام اس کا مجھے پلا یارب

کر کے گستر دہ خوانِ اُدْعُوْنِیْ                                                                                                                   تو نے بندوں کو دی صلا یارب

آستاں پر تِرے ترا منگتا                                  سن کرآیا ہے یہ صدا یارب

نعمتِ اَسْتَجِبسے پائے بھیک                                     ہاتھ پھیلا ہوا مرا یارب

تجھ سے وہ مانگوں میں جو بہتر ہو                        مُدَّعی ہو نہ مُدَّعا یارب

مجھے دونوں جہاں کے غم سے بچا                        شاد رکھ شاد دائما یارب

مجھ پر اور میرے دونوں بھائیوں پر                         سایہ ہو تیرے فضل کا یارب

عیش تینوں گھروں کے تینوں کو                        اپنی رحمت سے کر عطا یا رب

میرے فاروق و حامد و حسنین                            دَرد و غم سے رہیں جدا یارب

لخت دل مصطفیٰ حسین رضا                              ہر جگہ پائیں مرتبہ یارب

سایۂ پنجتن ہو پانچوں پر                                  دائما ہو تیری عطا یارب

دونوں عالم کی نعمتیں پائے                               مرتضیٰ بہر مصطفیٰ یارب

 



Total Pages: 158

Go To