Book Name:Zoq-e-Naat

پھنستا ہے وَبالوں میں عبث اَخترِ طالع

سرکار سے پائے گا شرف بہرِ شرف جا

 

آنکھوں کو بھی محروم نہ رکھ ُحسنِ ضیا سے

کی دل میں اگر اے مہ بے داغ و کلف جا

 

اے کلفت غم بندۂ مولیٰ سے نہ رکھ کام

بے فائدہ ہوتی ہے تری عمر تلف جا

 

اے طلعت شہ آ تجھے مولیٰ کی قسم آ

اے ظلمت دل جا تجھے اس رُخ کا حلف جا

 

ہو جلوہ فزا صاحب قوسین کا نائب

ہاں تیر دعا بہر خدا سوئے ہدف جا

 

کیوں غرقِ اَلم ہے دُرِّ مقصود سے مونھ بھر

نیسانِ کرم کی طرف اے تشنہ صدف جا

 

جیلاں کے شرف حضرتِ مولیٰ کے خلف ہیں

اے ناخلف اُٹھ جانبِ تعظیمِ خلف جا

 

تفضیل کا جویا نہ ہو مولا کی وِلا میں

یوں چھوڑ کے گوہر کو نہ تو بہر خذف جا

 

مولیٰ کی امامت سے محبت ہے تو غافل

اَربابِ جماعت کی نہ تو چھوڑ کے صف جا

 

کہدے کوئی گھیرا ہے بلاؤں نے حسنؔ کو

اے شیرِ خدا بہرِ مدد تیغِ بکف جا

 

درد دل کر مجھے عطا  یارب

       دردِ دِل کر مجھے عطا یارب                                     دے مرے دَرد کی دَوا یارب

لاج رکھ لے گنہگاروں کی                                نام رحمن ہے ترا یارب

عیب میرے نہ کھول محشر میں                          نام ستار ہے ترا یارب

بے سبب بخش دے نہ پوچھ عمل                        نام غفار ہے ترا یارب

زخم گہرا سا تیغ اُلفت کا                                   میرے دل کو بھی کر عطا یارب

یوں گموں میں کہ تجھ سے مل جاؤں                         یوں گما اس طرح ملا یارب

بھول کر بھی نہ آئے یاد اپنی                             میرے دل سے مجھے بھلا یارب

خاک کر اپنے آستانے کی                                یوں ہمیں خاک میں ملا یارب

 



Total Pages: 158

Go To