Book Name:Zoq-e-Naat

صنع خالق کے جتنے خاکے ہیں

رنگ سب میں بھرا ہوا تیرا

 

اَرضِ طیبہ قدومِ والا سے

ذَرَّہ ذَرَّہ سما ہوا تیرا

 

اے جناں میرے گل کے صدقے میں

تختہ تختہ بسا ہوا تیرا

 

اے فلک مہر حق کے باڑے سے

کاسہ کاسہ بھرا ہوا تیرا

 

اے چمن بھیک ہے تبسم کی

غنچہ غنچہ کھلا ہوا تیرا

 

ایسی شوکت کے تاجدار کہاں

تخت تختِ خدا ہوا تیرا

 

اس جلالت کے شہریار کہاں

مُلک مُلکِ خدا ہوا تیرا

 

اِس وَجاہت کے بادشاہ کہاں

حکم حکمِ خدا ہوا تیرا

 

خلق کہتی ہے لامکاں جس کو

شہ نشیں ہے سجا ہوا تیرا

 

زِیست وہ ہے کہ حسن یار رہے

دِل میں عالم بسا ہوا تیرا

 

موت وہ ہے کہ ذِکر دوست رہے

لب پہ نقشہ جما ہوا تیرا

 

ہوں زمیں والے یا فلک والے

سب کو صدقہ عطا ہوا تیرا

 

ہر گھڑی گھر سے بھیک کی تقسیم

رات دن دَر کھلا ہوا تیرا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To