Book Name:Zoq-e-Naat

ایک عالم خدا کا طالب ہے

اور طالب خدا ہوا تیرا

 

بزمِ اِمکاں ترے نصیب کھلے

کہ وہ دولھا بنا ہوا تیرا

 

میری طاعت سے میرے جرم فزوں

لطف سب سے بڑھا ہوا تیرا

 

خوفِ وَزْنِ عمل کسے ہو کہ ہے

دل مَدد پر تلا ہوا تیرا

 

کام بگڑے ہوئے بنا دینا

کام کس کا ہوا ہوا تیرا

 

ہر ادا دل نشیں بنی تیری

ہر سخن جاں فزا ہوا تیرا

 

آشکارا کمالِ شانِ حضور

پھر بھی جلوہ چھپا ہوا تیرا

 

پردہ دارِ اَدا ہزار حجاب

پھر بھی پردہ اُٹھا ہوا تیرا

 

بزمِ دنیا میں بزمِ محشر میں

نام کس کا ہوا ہوا تیرا

 

مَنْ     رَّاٰنِیْ     فَقَدْ    رَاَی    الْحَقّ

حسن یہ حق نما ہوا تیرا

 

بارِ عصیاں سروں سے پھینکے گا

پیش حق سر جھکا ہوا تیرا

 

یم جودِ حضور پیاسا ہوں

یم گھٹا سے بڑھا ہوا تیرا

 

وَصل وَحدت پھر اُس پہ یہ خلوت

تجھ سے سایہ جدا ہوا تیرا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To