Book Name:Zoq-e-Naat

تِرے رتبہ میں جس نے چون و چرا کی

نہ سمجھا وہ بدبخت رُتبہ خدا کا

 

تِرے پاؤں نے سر بلندی وہ پائی

بنا تاجِ سر عرشِ ربِّ علا کا

 

کسی کے جگر میں تو سر پر کسی کے

عجب مرتبہ ہے تِرے نقش پا کا

 

ترا دَردِ اُلفت جو دِل کی دوا ہو

وہ بے دَرد ہے نام لے جو دَوا کا

 

تِرے بابِ عالی کے قربان جاؤں

یہ ہے دُوسرا نام عرشِ خدا کا

 

چلے آؤ مجھ جاں بلب کے کنارے

کہ سب دیکھ لیں پھر کے جانا قضا کا

 

بھلا ہے حسنؔ کا جنابِ رضا سے

بھلا ہو الٰہی جنابِ رضا کا

سر صبح سعادت نے گریباں سے نکالا

سر صبح سعادت نے گریباں سے نکالا

ظلمت کو ملا عالم اِمکاں سے نکالا

 

پیدائشِ محبوب کی شادی میں خدا نے

مدت کے گرفتاروں کو زِنداں سے نکالا

 

رحمت کا خزانہ پئے تقسیمِ گدایاں

اللّٰہ    نے    تہ   خانۂ    پنہاں    سے    نکالا

 

خوشبو نے عنادِل سے چھڑائے چمن و گل

جلوے نے پتنگوں کو شبستاں سے نکالا

 

ہے حُسنِ گلوئے مہ بطحا سے یہ روشن

اب مہر نے سر ان کے گریباں سے نکالا

 

پردہ جو تِرے جلوۂ رنگیں نے اُٹھایا

صَرصَر کا عمل صحنِ گلستاں سے نکالا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To