Book Name:Zoq-e-Naat

گلزار کو آئینہ کیا مونھ کی چمک نے

آئینہ کو رخسار نے گلزار بنایا

 

یہ لذتِ پابوس کہ پتھر نے جگر میں

نقش قدمِ سید اَبرار بنایا

 

خدام تو بندے ہیں ترے خلق حسن نے

پیارے تجھے بدخواہ کا غمخوار بنایا

 

بے پردَہ وہ جب خاک نشینوں میں نکل آئے

ہر ذَرَّہ کو خورشید پُراَنوار بنایا

 

اے ماہِ عرب مہر عجم میں تِرے صدقے

ظلمت نے مِرے دن کو شب تار بنایا

 

لِلّٰہ  کرم    میرے  بھی   ویرانۂ    دل    پر

صحرا کو تِرے حسن نے گلزار بنایا

 

اللّٰہ    تعالیٰ   بھی   ہوا    اس   کا    طرفدار

سرکار تمہیں جس نے طرفدار بنایا

 

گلزارِ جناں تیرے لئے حق نے بنائے

اپنے لئے تیرا گل رُخسار بنایا

 

بے یار و مددگار جنہیں کوئی نہ پوچھے

ایسوں کا تجھے یار و مددگار بنایا

 

ہر بات بداَعمالیوں سے میں نے بگاڑی

اور تم نے مِری بگڑی کو ہر بار بنایا

 

اُس جلوہ ٔ رنگیں کا تصدق تھا کہ جس نے

فردوس کے ہر تختہ کو گلزار بنایا

 

ان کے دُرِ دَنداں کا وہ صدقہ تھا کہ جس نے

ہر قطرۂ نیساں دُرِّ شہوار بنایا

 

اس رُوحِ مجسم کے تبرک نے مسیحا

جاں بخش تمہیں یوں دَمِ ُگفتار بنایا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To