Book Name:Zoq-e-Naat

دو قدم بھی چل نہ سکتے ہم سر شمشیر تیز

ہاتھ پکڑے   رَبِّ  سَلِّم  کا  نگہباں  لے  چلا

 

دستگیرِ خستہ حالاں دستگیری کیجیے

پاؤں میں رَعشہ ہے سر پر بارِ عصیاں لے چلا

 

وقتِ آخر نااُمیدی میں وہ صورت دیکھ کر

دل شکستہ دل کے ہر پارہ میں قرآں لے چلا

 

قیدیوں کی جنبش اَبرو سے بیڑی کاٹ دو

ورنہ جرموں کا تسلسل سوئے زِنداں لے چلا

 

روزِ محشر شاد ہوں عاصی کہ پیش کبریا

رحم ان کو امتی گویاں و گریاں لے چلا

 

شکل شبنم راتوں کا رونا ترا اَبر کرم

صبحِ محشر صورتِ گل ہم کو خنداں لے چلا

 

کشتگانِ ناز کی قسمت کے صدقے جائیے

ان کو مقتل میں تماشائے شہیداں لے چلا

 

اختر اسلام چمکا کفر کی ظلمت چھنٹی

بدر میں جب وہ ہلالِ تیغ براں لے چلا

 

بزمِ خوباں کو خدا نے پہلے دیں آرائشیں

پھر مرے دولہا کو سوئے بزمِ خوباں لے چلا

 

اللّٰہ اللّٰہ  صَرصَرِ  طیبہ  کی   رنگ  آمیزیاں

ہر بگولا نزہت سروِ گلستاں لے چلا

 

غمزدوں کو جب شفاعت نے کیا امیدوار

عفو خوشخبری سناتا پیش یزداں لے چلا

 

قطرہ قطرہ اُن کے گھر سے بحر عرفاں ہو گیا

ذَرَّہ ذَرَّہ اُن کے دَر سے مہر تاباں لے چلا

 

صبح محشر ہر اَدائے عارِضِ روشن میں وہ

شمع نور اَفشاں پئے شامِ غریباں لے چلا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To