Book Name:Zoq-e-Naat

دو عالم میہماں تو میزباں خوانِ کرم جاری

ادھر بھی کوئی ٹکڑا میں بھی کتا ہوں ترے در کا

 

نہ گھر بیٹھے ملے جوہر صفا و خاکساری کے

مرید ذرّۂ طیبہ ہے آئینہ سکندر کا

 

اگر اس خندۂ دنداں نما کا وصف موزوں ہو

ابھی لہرا چلے بحرِ سخن سے چشمہ گوہر کا

 

تِرے دامن کا سایہ اور دامن کتنے پیارے ہیں

وہ سایہ دشت محشر کا یہ حامی دِیدۂ تر کا

 

تمہارے کوچہ و مرقد کے زائر کو میسر ہے

نظارہ باغِ جنت کا تماشہ عرشِ اَکبر کا

 

گنہگارانِ اُمت ان کے دامن پر مچلتے ہوں

الٰہی چاک ہو جس دم گریباں صبح محشر کا

 

ملائک جن و اِنساں سب اسی دَر کے سلامی ہیں

دو عالم میں ہے اک ُشہرہ مِرے محتاج پروَر کا

 

الٰہی تشنہ کامِ ہجر دیکھے دشت محشر میں

برسنا اَبر رحمت کا چھلکنا حوضِ کوثر کا

 

زیارت میں کروں اور وہ شفاعت میری فرمائیں

مجھے ہنگامۂ عیدین یارب دن ہو محشر کا

 

نصیب دوستاں ان کی گلی میں گر سکونت ہو

مجھے ہو مغفرت کا سلسلہ ہر تار بستر کا

 

وہ گریہ اُستن حنانہ کا آنکھوں میں پھرتا ہے

حضوری نے بڑھایا تھا جو پایا اَوجِ منبر کا

 

ہمیشہ رہروانِ طیبہ کے زیر قدم آئے

الٰہی کچھ تو ہو اعزاز میرے کاسۂ سر کا

 

سہارا کچھ نہ کچھ رکھتا ہے ہر فردِ بشر اپنا

کسی کو نیک کاموں کا حسنؔ کو اپنے یاوَر کا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To